اخبار الجماعت 29-2019 - ھفت روزہ اھل حدیث

Breaking

Saturday, July 27, 2019

اخبار الجماعت 29-2019


اخبار الجماعت

آل پارٹیز اجلاس میں جماعت کی شرکت … اور سینٹ میں تحریک عدم اعتماد
آج کل پاکستان میں سیاسی ماحول خوب گرم ہے۔ جناب عمران خان اور چیف آف آرمی سٹاف پر بھی زوروں سے تبصرے اور تجزیئے ہو رہے ہیں اور سینٹ چیئرمین کی تبدیلی پر بھی حکومت واپوزیشن آمنے سامنے ہیں۔ گذشتہ دنوں (۲۵ جون مارگلہ ہوٹل اسلام آباد میں) اپوزیشن نے حکومت کے خلاف متحد ہو کر جد وجہد کرنے کا جو ڈول ڈالا تھا‘ اس کے نتیجے میں سیاسی فضا گرما گرم ہو چکی ہے۔ آل پارٹیز کانفرنس میں جماعت کی طرف سے امیر محترم جناب سینیٹر پروفیسر ساجد میر d اور رانا محمد شفیق خاں پسروری نے شرکت کی۔ اس کانفرنس میں فیصلہ ہوا کہ ملک وقوم کی بہتری کے لیے تمام اپوزیشن مل کر چلے‘ اتحاد ویکجہتی قائم رکھے‘ سیاسی فیصلوں کے لیے ایک ۱۱ رکنی ’’رہبر کمیٹی‘‘ تشکیل دی گئی‘ جس میں امیر محترم نے رانا محمد شفیق خاں پسروری کا نام بطور ممبر دیا۔ اس کمیٹی نے ۵ جولائی کے اجلاس میں چیئرمین سینٹ صادق سنجرانی کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک لانے کا فیصلہ کیا۔ ۱۱ جولائی کے اجلاس میں چیئرمین کے لیے جناب حاصل بزنجو کو مشترکہ ومتفقہ امیدوار بنایا گیا اور ۲۵ جولائی کو پورے ملک میں عام انتخابات میں دھاندلی‘ بڑھتی ہوئی مہنگائی اور بے جا سنسر شپ کے خلاف ’’یوم سیاہ‘‘ منانے اور ملک بھر میں احتجاجی جلسوں‘ ریلیوں اور اجتماعات کا فیصلہ کیا گیا۔ اسی سلسلہ میں ایک ہنگامی میٹنگ ۲۲ جولائی کو بھی ہوئی۔ ۲۲ جولائی کو سینٹ میں اپوزیشن کے ۶۲ ممبران نے جمع ہو کر اپنی عددی اکثریت کا اظہار کیا۔ جبکہ چار اہم ارکان اپنی بعض مجبوریوں کے باعث حاضر نہ ہو سکے۔ جبکہ حکومتی ارکان صرف ۱۹ جمع ہو سکے۔ اب اپوزیشن کے پاس ۶۶ ارکان کی واضح اکثریت ہے۔اس صورتحال میں اگر پھر بھی اپوزیشن کامیاب نہیں ہو پاتی تو واضح طور پر اس میں ریاستی جبر اور غیر جمہوری حربوں ہی کا ہاتھ سمجھا جائے گا۔ ہم سمجھتے ہیں کہ مملکت خدا داد پاکستان کے استحکام‘ بقا وتحفظ اور ترقی‘ حقیقتاً اسلام اور اسلامی نظام اور جمہوری روایات ہی سے وابستہ ہے۔ تمام ملکی ادارے اگر اپنے اپنے آئینی دائرہ کار میں رہ کر کام کریں اور جمہوری اخلاقیات کو پامال نہ کیا جائے تو ملک وقوم کی بہتری اور ترقی کا راستہ اُجلا اور منزل قریب تر ہو سکتی ہے ورنہ یونہی انتشار وبدتری کی فضا قائم رہنے کا خدشہ ہے۔
ختم نبوت کے قانون پر کسی کو ڈاکہ مارنے کی اجازت نہیں دیں گے: امیر محترم
قانون توہین رسالت کے خلاف سازشیں قادیانی واستعمار کا ایجنڈا ہے۔ ختم نبوت کے معاملے پر تمام دینی‘ سیاسی جماعتیں متفق ہیں
لاہور (     ) مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے سربراہ سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ قادیانی امریکی صدر سے مدد مانگیں یا کسی اور سے ختم نبوت کے معاملہ پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا ۔ پاکستان ختم نبوت کے وارثوں کا وطن ہے ۔یہاں ختم نبوت کے قانون پر کسی کو ڈاکہ مارنے کی اجازت نہیں دیں گے۔ قانون توہین رسالت کے خلاف سازشیں قادیانی و استعماری ایجنڈا ہے۔ قادیانی انگریز کا پیدا کردہ فتنہ ہے ۔آج بھی طاغوت اسکی مدد کررہا ہے ۔امریکی صدر ہویا دنیا کی کوئی اورطاقت پاکستان میں قادیانیوں کے غیر مسلم ہونے کے قانون کو تبدیل نہیں کرسکتی ۔جو قادیانی رہا ہو کر امریکی صدر سے مددمانگ رہا ہے اس کی تحقیقات ہونی چاہئیں کہ اسے رہائی کیسے ملی اور اسے کس ادارے نے فرارکروایا۔ انہوں نے کہا کہ دشمن اس طاق میں بیٹھا ہے کہ وہ کس طرح اسلامی شعائر اور ہمارے عقائد پر حملہ آور ہو۔ مسیلمہ کذاب سے لیکر مرزا قادیانی تک ہر زمانے میں نبوت پر ڈاکہ زنی کرنے کی کوشش کی گئی۔ ہم مجاہدین ختم نبوت کو سلام پیش کرتے ہیںجنہوں نے تحفظ ناموس رسالت کا فریضہ سرانجام دیتے ہوئے جھوٹے مدعیان نبوت کے ناپاک عزائم کو خاک میں ملایا۔ ا ن خیالات کا اظہار انہوں نے جامعہ ابراہیمیہ میں جمعہ کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ پروفیسر ساجد میر کا کہنا تھا کہ قادیانیت کے متعلق غیر مسلم اقلیت کے قوانین ختم کرنے والوں کی سازشوں کا مردانہ وار مقابلہ کیا ہے اور کیا جائے گا۔ ہمیں اتحاد و یگانگت سے غداران ختم نبوت اور اسلام دشمن عناصر کا جرأت مندی سے مقابلہ کرنا ہوگا۔ ۱۹۷۴ء میں تمام مذہبی قیادت نے دلائل کے ساتھ قادیانیوں کو چاروں شانے چت کیا ۔اب بھی پارلیمنٹ میں اس قانون کا پہرہ دیں گے ۔ ختم نبوت کے معاملہ پر کسی بھی قسم کا سمجھوتہ نہیں کیا جا سکتا۔ تمام دینی سیاسی جماعتیں کسی بھی صورت اسے قبول نہیں کریں گی۔ انہو ں نے خبردار کیا کہ ختم نبوت پر جس نے بھی کاری ضرب لگانے کی کوشش کی اسے نشان عبرت بنا دیں گے ۔ختم نبوت کے معاملے پر تمام دینی، سیاسی جماعتیں متفق ہیں۔
ملک میں ایک جماعت کی بالا دستی کی کوشش آمریت قائم کرنے کے مترادف ہے: امیر محترم
لاہور (   ) مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے سربراہ سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ ملک میں ون پارٹی رول قائم کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔رانا ثنا اللہ کی گرفتاری، شہباز شریف سمیت دیگر رہنمائوں پر الزامات کا مقصد ون پارٹی رول کا قائم کرنا ہے۔ملک میں ایک جماعت کی بالادستی کی کوشش آمریت قائم کرنے کے مترادف ہے۔ اس امر کا اظہار انہوں نے کینیڈا کے دورے سے واپسی پر علامہ اقبال انٹر نیشنل ائیرپورٹ پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ پروفیسر ساجد میر کا کہنا تھا کہ پاکستان میں جمہوریت کی بالاد ستی کے لیے ضروری ہے کہ تمام بڑی جماعتوں کا وجود خوش دلانہ طور پر تسلیم کیا جائے۔ پاکستان کے وفاق اور اسکے استحکام کے لیے تمام جماعتوں اور اکائیوں کا وجود ناگزیر ہے۔اگر اس سوچ کو پروان چڑھایا گیا تو ملک کے استحکام کی ضمانت نہیں دی جاسکتی ۔ون پارٹی رول آمریت کا دوسرانام ہے۔ یہ سوچ قومی اتحاد اور اس کے وجود کے لیے ہرگز فائدہ مند نہیں۔ وفاق اور مختلف الخیال جماعتوں اور اکائیوں کے بغیر قائم نہیں رہ سکتا۔ اس میں سب جماعتوں کی خوش دلانہ شرکت ضروری ہے۔ حافظ سعید کی گرفتاری کے متعلق ان کا کہنا تھاکہ پہلے تو انکی بڑی سرپرستی کی جاتی تھی‘ اب انہیں بیرونی دبائو میں گرفتار کیا گیا ہے۔یہ ایف اے ٹی ایف کی شرائط پوری کی جارہی ہیں۔ پاکستان کی کوشش ہے کہ ہم دہشت گردی کے حوالے سے گرے لسٹ سے بلیک لسٹ  میں نہ چلے جائیں۔ حافظ سعید کی گرفتاری  اسی سلسلے میں کی گئی ہے۔ پروفیسر ساجد میر نے جج ارشد ملک کی مبینہ ویڈیوز کے متعلق کہا کہ اب معاملہ عدالت میں ہے مگر میرے نزدیک جج ارشد ملک کا بیان حلفی اعتراف جرم کے متراد ف ہے۔ سوال یہ ہے کہ وہ رائیونڈ میاں نوازشریف کے پاس کیا لینے گئے۔ کیا وہاں سودا طے نہیں ہوا؟ساری کہانی کو یہی بات مشکوک بنادیتی ہے کہ ایک حاضر سروس جج  نام نہاد ملزم کے گھر کیسے چلا گیا۔ اکیلی یہ بات ظاہر کرتی ہے کہ دال میں کالا ضرور ہے ۔ دریں اثنا انہوں نے  عالمی عدالت میں بھارتی جاسوس کی طرف سے رہائی کی درخواست کے مسترد ہونے کو خوش آئند قراردیا ۔ان کا کہنا تھاکہ عالمی عدالت میں پاکستان کی جیت بڑی کامیابی ہے ۔ بھارت کو عالمی عدالت میں منہ کی کھانا پڑی۔ بھارتی جاسوس کو قانون کے مطابق پھانسی ملنی چاہیے ۔
ضلع ڈیرہ اسماعیل خان کی تبلیغی سرگرمیاں
12 جولائی بروز جمعۃ المبارک جامع مسجد عبداللہ بن عباس ضلع ٹانک میں تبلیغی پروگرام منعقد ہوا جس میں مولانا خالد محمود اظہر ناظم ڈی جی خان اور مولانا سیف اللہ رحمانی آف سرگودھا اور قاری یٰسین حیدر صدر AYF ڈی جی خان نے خطاب کیا۔
ہفتہ رفتہ مرکزی جمعیت اہل حدیث صوبہ خیبر پختونخواہ کے ناظم اعلیٰ ڈاکٹر ذاکر شاہ صاحب اور نائب ناظم شیخ عمر بن عبدالعزیز صاحب اور نائب امیر شیخ عبدالحمید رحمتی نے ڈیرہ اسماعیل خان کی مختلف مساجد کا دورہ کیا‘ شوریٰ کے ممبران سے ملاقات کی اور جماعت کے انتظامی امور پر بات چیت کی۔
ضلع ڈیرہ اسماعیل خان میں شوریٰ کا ماہانہ اجلاس منعقد ہوتا ہے‘ پورے مہینے کی کارگذاری سنائی جاتی ہے اور مشورہ کر کے تبلیغی پروگرامز تشکیل دیے جاتے ہیں۔ دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ ہماری جماعت کو ترقی نصیب فرمائے اور ہمیں اتفاق واتحاد اور مل جل کر کام کرنے کی توفیق دے۔ آمین!
قاری صبغت اللہ احسن نائب امیر ضلع قصور نامزد
مرکزی جمعیت اہل حدیث کی کابینہ کا ایک اہم اجلاس مورخہ 5 جولائی بروز جمعہ بعد نماز جمعہ ضلعی دفتر میں منعقد ہوا جس کی صدارت ضلعی امیر مولانا میاں داؤد ارشد نے کی۔ ضلعی جمعیت کی کارکردگی پر بحث کی گئی اور گذشتہ ہونے والا اجلاس ضلعی کابینہ اور امراء تحصیل کا جائزہ لیا گیا اور آئندہ ہونے والی صوبائی کانفرنس کے سلسلے میں یوتھ فورس کی تیاری کے متعلق بھی غور کیا گیا۔ دیگر امور کے علاوہ اس اجلاس میں قاری صبغت اللہ احسن صاحب کی جماعت کے لیے خدمات کو سراہا گیا اور مرکزی جمعیت کا ضلعی نائب امیر نامزد کیا گیا۔ امید ہے قاری صاحب احسن انداز میں جماعتی کام کریں گے۔ ان شاء اللہ! دیگر احباب کے علاوہ ضلعی ناظم قاری محمد صدیق شاکر‘ سینئر نائب ناظم مولانا ظفر عباس نوید‘ ناظم تبلیغ حافظ محمد حنیف الٰہ آباد اور راقم الحروف ناظم نشر واشاعت نے بطور خاص شرکت کی۔ قاری صاحب کی دعا سے اجلاس اختتام پذیر ہوا۔
آزاد جموں وکشمیر کی مجلس شوریٰ کا اجلاس
مرکزی جمعیت اہل حدیث آزادجموں وکشمیر کی مرکزی مجلس شوری کا اجلاس گزشتہ روز امیر آزاد جموں وکشمیر مولانامحمد صدیق صدیقی بالاکوٹی کی زیر صدارت منعقد ہوا۔ آزاد جموں وکشمیر بھر سے اراکین مرکزی مجلس شوری نے شرکت کی ۔ اجلاس میں درج ذیل قراردادیں اتفاق رائے کے ساتھ منظور کی گئیں۔ آج کا اجلاس لیسوا وادی نیلم میں کلائوڈ برسٹ کے نتیجے میں رونماء ہونے والے حادثے پر نہایت افسوس کا اظہار کرتا ہے اور اس حادثہ میں جاں بحق ہونے والے تمام مرحومین کے لیے دعائے مغفرت کرتا ہے۔ اجلاس متاثرین لیسواء کو بروقت ریلیف و مدد فراہم کرنے پر پاک فوج کو خراج تحسین پیش کرتا ہے۔ سعودی عرب کے سفیر نواف بن سعید المالکی کے لیسواء متاثرین کی دلجوئی کے لیے وادی نیلم کا دورہ کرنے پر ان کو خراج تحسین پیش کرتا ہے  اور مملکت سعودیہ عرب کی جانب سے متاثرین کی ہر ممکن مدد کرنے اور ان کے گھروں ،سکول ،ہسپتال و مساجد کی تعمیر سمیت دیگر فلاحی منصوبوں کے اعلان پر مرکزی جمعیت اہل حدیث آزاد جموں وکشمیر ریاستی عوام بالخصوص وادی نیلم کے عوام کی جانب سے سعودی عرب کا شکریہ ادا کرتی ہے ۔ اجلاس پاکستان کی قومی اسمبلی میں قادیانیوں کو آئینی طور پر غیر مسلم اقلیت قرار دیئے جانے کے فیصلہ کے با وجود پاکستان میں قادیانیوں کی بڑھتی ہوئی سرگرمیوں پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت پاکستان سے مطالبہ کرتا ہے کہ قادیانیوںکی ملک پاکستان میں جاری سرگرمیوں اور بالخصوص بین الاقوامی سطح پر قادیانیوں کی جانب سے اسلام و پاکستان دشمنی سرگرمیوں کا نوٹس لیا جائے۔ آج کا اجلاس مقبوضہ کشمیر جمعیت اہل حدیث کے مرکزی نائب امیر مولانا مشتاق احمد ویری سمیت دس اہل حدیث علماء کو ہندوستانی قابض افواج کی جانب سے پبلک سیفٹی ایکٹ کے تحت گرفتار کرنے کی شدید مذمت کرتا ہے اور ان کی ثابت قدمی پر ہم ان کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں اور ان کی جلد رہائی کے لیے دعا گو ہیں۔
راولا کوٹ ... حلف برداری
راولاکوٹ … مرکزی جمعیت اہل حدیث آزاد جموں وکشمیر کی مرکزی مجلس شوری کے اجلاس میں دو نائب امراء نے اپنے عہدے کا حلف اٹھایا۔ سنیئر نائب امیر آزاد جموں وکشمیر سید عتیق الرحمن شاہ محمدی نے سابق رجسٹرار سپریم کورٹ آزاد جموں وکشمیر و مرکزی رہنماء محمد ادریس مغل ایڈووکیٹ (میرپور) و سابق ڈی ای او محکمہ تعلیم و مرکزی رہنماء پروفیسر عبدالرؤف بٹ(کوٹلی) سے نائب امیر مرکزی جمعیت آزاد جموں وکشمیر کے عہدے کا حلف لیا۔ اس موقع پر امیر آزاد جموں وکشمیر مولانا محمد صدیق بالاکوٹی ،سرپرست مولانا محی الدین اثری ،ناظم اعلیٰ مولانا دانیال شہاب مدنی سمیت آزاد کشمیر بھر سے مرکزی جمعیت اہل حدیث آزاد جموں وکشمیر کے اراکین شوری موجود تھے۔
اپیل دعائے مغفرت
جامع مسجد حفظانی اہل حدیث خوشاب کے صدر میاں فضل حق رحمہ اللہ کے بھتیجے چوھدری عبدالرحمنؒ کے بیٹے چوہدری عطاء اللہ‘ 10 جولائی کی شب قضائے الٰہی سے وفات پا گئے‘ نماز جنازہ 11 جولائی 11 بجے ریلوے گراؤنڈ خوشاب میں شیخ الحدیث حافظ مسعود عالم حفظہ اللہ نے پڑھائی۔ نماز جنازہ سے قبل پرنسپل جامعہ سلفیہ فیصل آباد پروفیسر یٰسین ظفر نے چوہدری عطاء اللہ کی مذہبی‘ سماجی اور رفاہی خدمات کا تذکرہ کیا۔ نماز جنازہ میں ناظم مالیات مرکزیہ حاجی عبدالرزاق‘ اساتذہ جامعہ سلفیہ‘ امیر ضلع خوشاب مولانا دلدار عاجز‘ مولانا شکیل اصغر‘ قاری عیسیٰ فاروقی‘ قاری عبدالوہاب‘ پروفیسر احسان اللہ فاروقی‘ مولانا نصر اللہ فاروقی‘ مولانا حبیب الرحمن یزدانی اور دیگر مذہبی وسیاسی لوگوں کے علاوہ کثیر تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔ مرکزی جمعیت واہل حدیث یوتھ فورس ضلع خوشاب کی کابینہ اور کارکنان‘ چوہدری عطاء اللہ کے بیٹوں چوہدری عبدالمنان‘ چوہدری عبدالحنان‘ بھتیجا شجاع الرحمن اور سرپرست ضلع خوشاب جناب میاں بلال طارق صاحب کے غم میں برابر کے شریک ہیں۔ دعا گو ہیں کہ اللہ تعالیٰ چوہدری صاحب کی بخشش فرمائے اور تمام لواحقین کو صبر جمیل عطا فرمائے۔ قارئین کرام واحباب جماعت سے دعا کی درخواست ہے۔
جامع مسجد خالد بن ولید اہل حدیث امیر والا کے بانی حاجی نور احمد رحمہ اللہ کی اہلیہ اور حاجی سیف اللہ تریڑ کی والدہ اور مرکز مریم بنت عبداللہ کے مہتمم حاجی عبدالرحمن کی خالہ 11 جولائی کو قضائے الٰہی سے وفات پاگئیں۔ مرحومہ انتہائی نیک‘ پابند صوم وصلوٰۃ تہجد گذار خاتون تھیں۔ مسجد کے ساتھ محبت کرنے والی اور اس کی صفائی ستھرائی کا خیال رکھنے والی تھیں۔ نماز جنازہ رات ساڑھے دس بجے مولانا حبیب الرحمن یزدانی ناظم تحصیل قائد آباد نے پڑھائی۔ امیر ضلع مولانا دلدار عاجز‘ مولانا احسان اللہ فاروقی‘ رانا حبیب اللہ اور دیگر احباب لواحقین کے ساتھ اظہار تعزیت کے لیے وفد کی صورت میں امیر والا تشریف لائے اور مرحومہ کے لیے مغفرت کی دعا اور لواحقین کے لیے صبر جمیل کی دعا کی۔ امیر ضلع نے کہا کہ تمام احباب جماعت وکارکنان اور سرپرست جناب میاں بلال طارق صاحب آپ کے غم میں برابر کے شریک ہیں۔ تمام قارئین کرام واحباب جماعت سے دعا کی درخواست ہے۔


No comments:

Post a Comment