غضبِ الٰہی... اثرات‘ اسباب اور تحفظ - ھفت روزہ اھل حدیث

Breaking

Wednesday, July 24, 2019

غضبِ الٰہی... اثرات‘ اسباب اور تحفظ


غضبِ الٰہی... اثرات‘ اسباب اور تحفظ

امام الحرم المدنی فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر جسٹس عبدالمحسن قاسم d
ترجمہ: جناب شفقت الرحمٰن                                       نظر ثانی: جناب  اللہ بخش
حمد و ثناء کے بعد!
اللہ کے بندو! کما حقّہ تقوی اپناؤ؛ کیونکہ متقی کامیاب ہو گا اور یاد الٰہی سے منہ موڑنے والا تباہ ہو گا۔
مسلمانو! اللہ تعالی نے مخلوق کو آیات قرآنی اور نبیe کی زبانی اپنا تعارف کروایا۔ اللہ تعالی کے اسما وصفات انتہائی اعلیٰ ہیں۔ اللہ کی صفات پر غور و فکر اور ان کے ذریعے اللہ کی بندگی اللہ کی محبت اور جنت کا راستہ ہے۔
اسما و صفات پر غور و فکر کی بدولت اللہ تعالی سے خوف، امید، محبت اور توکل وغیرہ جیسی خوبیاں پروان چڑھتی ہیں۔
امت محمدیہ کے سلف صالحین کا عقیدہ ہے کہ جو کچھ بھی کتاب و سنت میں اللہ تعالی کے اسما و صفات بیان ہوئے ہیں انہیں ثابت مانیں؛ اللہ کا خوف اور خشیت پیدا کرنے والی صفات الٰہیہ میں غضب کی صفت بھی شامل ہے۔ اللہ تعالی غضبناک ہوتا ہے اور راضی بھی ؛ لیکن کائنات میں سے کسی کے ساتھ اس کی مشابہت نہیں ۔
اللہ تعالی کی صفات میں سے ہر صفت کا خلقت پر اثر ہوتا ہے، چنانچہ اللہ تعالی کی صفت غضب کا اثر دنیا میں رونما ہونے والی عمومی سزاؤں اور بلاؤں کی صورت میں نظر آتا ہے۔ فرمانِ باری تعالیٰ ہے:
{وَمَنْ یَحْلِلْ عَلَیْہِ غَضَبِی فَقَدْ ہَوٰی}
’’اور جس پر میرا غضب نازل ہو گا تو وہ تباہ ہو گیا۔‘‘ (طٰہٰ: ۸۱)
سفیان بن عیینہ رحمہ اللہ کہتے ہیں: ’’اللہ کے غضب سے چھٹکارے کی کوئی دوا نہیں۔‘‘
اللہ کی ناراضی سے انسان کے اعمال غارت ہو جاتے ہیں۔ اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{ذَلِکَ بِاَنَّہُمُ اتَّبَعُوا مَا اَسْخَطَ اللّٰہَ وَکَرِہُوا رِضْوَانَہُ فَاَحْبَطَ اَعْمَالَہُمْ} (محمد: ۲۸)
’’یہ اس لیے کہ انہوں نے اللہ کی ناراضی کا باعث بننے والی چیزوں کی پیروی کی اور رضائے الٰہی کو پسند نہ کیا، تو اللہ نے ان کے اعمال غارت کر دئیے۔‘‘
اللہ جس قوم پر غضبناک ہو تو ان سے انتقام لیتا ہے۔ جیسے کہ اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{فَلَمَّآ اٰسَفُونَا انْتَقَمْنَا مِنْہُمْ}
’’تو جب انہوں نے ہمیں غضبناک کیا تو ہم نے ان سے انتقام لے لیا۔‘‘ (الزخرف: ۵۵)
ابن قیمa کہتے ہیں:
’’عذاب اللہ تعالی کی صفت غضب سے پیدا ہوتا ہے، اور آگ اللہ کے غضب سے ہی بھڑکائی جاتی ہے۔‘‘
اللہ تعالی نے کچھ اقوام کو سزا سے دو چار کیا اور ان کے واقعات ہمیں اس لیے بتلائے تا کہ ہم ان کے کئے ہوئے گناہوں سے باز رہیں۔ فرمانِ باری تعالی ہے:
{ضُرِبَتْ عَلَیْہِمُ الذِّلَّۃُ اَیْنَ مَا ثُقِفُوْا اِلَّا بِحَبْلٍ مِنَ اللّٰہِ وَحَبْلٍ مِنَ النَّاسِ وَبَآئُوا بِغَضَبٍ مِنَ اللّٰہِ} (آل عمران: ۱۱۲)
’’وہ جہاں کہیں پائے گئے ان پر ذلت تھوپ دی گئی، الا یہ کہ اللہ کی طرف سے کوئی سبب پیدا ہو جائے یا انسانوں کی طرف سے ، آخر کار وہ اللہ کا غضب لے کر لوٹے۔‘‘
ایک قوم نے اللہ کی آیات کا انکار کیا تو انہیں پے در پے غضب الٰہی مول لینا پڑا، اور ایک قوم پر اللہ تعالی غضبناک ہوا تو ان کی شکلوں کو مسخ کر دیا۔ جیسے کہ رسول اللہe کا فرمان ہے:
’’بنی اسرائیل کے ایک قبیلے پر اللہ تعالی غضبناک ہوا تو انہیں جانوروں میں بدل دیا اور وہ زمین پر رینگنے لگے۔‘‘ (مسلم)
تمام انبیائے کرام نے اپنی اقوام کو اللہ تعالی کے غضب سے خبردار کیا ہے، جیسے کہ موسیu نے اپنی قوم کو خبردار کرتے ہوئے خطاب کیا اور کہا:
{اَمْ اَرَدْتُمْ اَنْ یَحِلَّ عَلَیْکُمْ غَضَبٌ مِنْ رَبِّکُمْ} (طٰہٰ: ۸۶)
’’یا تمہارا ارادہ ہے کہ تم پر تمہارے پروردگار کا غضب نازل ہو!؟
فطرتِ سلیم رکھنے والے غضب الٰہی سے ڈرتے رہتے ہیں، جیسے کہ نبیe کی بعثت سے قبل زید بن عمرو بن نفیل سچے دین کی جستجو میں نکلے اور ایک یہودی عالم سے ملے، تو آپe نے ان سے یہودیت کے متعلق پوچھا تو یہودی عالم نے کہا: تم اس وقت تک ہمارے دین میں شامل نہیں ہو سکتے جب تک تم غضب الٰہی میں سے اپنا حصہ نہ لے لو۔ اس پر زید نے کہا: میں اللہ کے غضب ہی سے تو بچنا چاہتا ہوں، میں کبھی بھی اللہ کے غضب کا متحمل نہیں ہو سکتا، میں کس طرح غضب الٰہی برداشت کر سکتا ہوں؟‘‘ (بخاری)
مسلمان ہمیشہ اللہ تعالی سے رحمت اور رضائے الٰہی کی امید کرتے ہوئے لو لگاتا ہے، وہ ہمیشہ اللہ کے غضب اور ناراضی سے بچتا ہے، جبکہ شرک غضب الٰہی اور عذاب کا سب سے بڑا موجب ہے۔ فرمانِ باری تعالی ہے:
{اِنَّ الَّذِینَ اتَّخَذُوا الْعِجْلَ سَیَنَالُہُمْ غَضَبٌ مِنْ رَبِّہِمْ وَذِلَّۃٌ فِی الْحَیَاۃِ الدُّنْیَا}
’’جن لوگوں نے بچھڑے کو معبود بنایا ان تک ان کے پروردگار کا غضب ضرور پہنچے گا اور دنیا میں انہیں ذلت ملے گی۔‘‘ (الأعراف: ۱۵۲)
قبروں کے پاس یا قبروں کی طرف منہ کر کے نماز غضب الٰہی کا سبب بنتی ہے۔ رسول اللہe کا فرمان ہے:
’’اپنے انبیائے کرام کی قبروں کو سجدہ گاہ بنانے والوں پر اللہ کا شدید ترین غضب ہوا۔‘‘ (موطأ امام مالک)
اللہ تعالی کی صفات میں شراکت داری کے لئے کوشش کرنے والے پر اس کی کاوش بطور عذاب الٹی پڑ جاتی ہے۔ جیسے کہ رسول اللہe کا فرمان ہے:
’’اپنے آپ کو شہنشاہ کہلوانے پر اللہ تعالی کا شدید ترین غضب ہوا۔‘‘ (مسند امام احمد)
اللہ تعالی کی ذات نہایت سخی ہے؛ اسی لیے اللہ تعالی کو یہ بات پسند ہے کہ بندے اس سے مانگتے رہیں، چنانچہ جو اللہ سے نہیں مانگتا اس سے اللہ تعالی ناراض ہوتا ہے۔ آپe کا فرمان ہے:
’’جو اللہ سے نہ مانگے تو اللہ تعالی اس پر غضبناک ہوتا ہے۔‘‘ (جامع الترمذی)
کفر اللہ کو محبوب نہیں اور نہ ہی اسے پسند کرتا ہے، چنانچہ جب بھی کوئی بندہ کفر کرے تو اللہ تعالی اس پر غضبناک ہوتا ہے۔ فرمانِ باری تعالیٰ ہے:
{مَنْ شَرَحَ بِالْکُفْرِ صَدْرًا فَعَلَیْہِمْ غَضَبٌ مِنَ اللّٰہِ وَلَہُمْ عَذَابٌ عَظِیمٌ}(النحل: ۱۰۶)
’’جس نے خوشی سے کفر کیا ان پر اللہ کا غضب ہے اور ان کے لیے بہت بڑا عذاب ہے۔‘‘
معاشرے میں بہتری اس وقت آتی ہے جب ظاہر اور باطن دونوں ہی صاف ہوں، لیکن اگر کوئی دل میں تو برائی رکھے اور ظاہر کچھ اور کرے تو اس کا اللہ کے بارے میں گمان اچھا نہیں؛ اسی بنا پر وہ غضب الٰہی کا مستحق ٹھہرتا ہے۔ فرمانِ باری تعالی ہے:
{وَیُعَذِّبَ الْمُنَافِقِینَ وَالْمُنَافِقَاتِ وَالْمُشْرِکِینَ وَالْمُشْرِکَاتِ الظَّآنِّیْنَ بِاللّٰہِ ظَنَّ السَّوْٓئِ عَلَیْہِمْ دَآئِرَۃُ السَّوْٓئِ وَغَضِبَ اللّٰہُ عَلَیْہِمْ وَلَعَنَہُمْ وَاَعَدَّ لَہُمْ جَہَنَّمَ وَسَائَتْ مَصِیْرًا} (الفتح: ۶)
’’اور اللہ کے بارے میں برا گمان کرنے والے منافق مردوں اور عورتوں نیز مشرک مردوں اور عورتوں کو اللہ سزا دے ، یہی لوگ برے حالات میں پھنسے ہوئے ہیں، اور اللہ ان پر غضبناک ہے، ان پر اللہ کی لعنت بھی ہے نیز ان کے لیے جہنم تیار کی ہوئی ہے اور وہ بری لوٹنے کی جگہ ہے۔‘‘
ساری خلقت میں سے رسول چنیدہ ہوتے ہیں، اس لیے جو بھی رسولوں کو تکلیف دے تو وہ اللہ کے شدید ترین غضب کا مستحق ٹھہرتا ہے، آپe کا فرمان ہے:
’’ایسی قوم پر اللہ تعالی شدید ترین غضبناک ہوا جنہوں نے اللہ کے نبی کا چہرہ خون آلود کر دیا۔‘‘ (متفق علیہ)
بد ترین مخلوق وہ ہے جسے کسی نبی نے قتل کیا ہو۔ رسول اللہe کا فرمان ہے:
’’اس شخص پر اللہ تعالی شدید ترین غضبناک ہوا جسے نبی نے قتل کیا۔‘‘ (متفق علیہ)
اللہ کے ولیوں اور نیک بندوں کو خفا کرنے والا اللہ تعالی کو اپنے اوپر غضبناک کر لیتا ہے۔ آپe کا فرمان ہے:
’’اگر تم نے انہیں (یعنی صحابہ کرام کو) خفا کر دیا تو تم نے اپنے پروردگار کو غضبناک کر دیا۔‘‘ (مسلم)
مصیبت کے وقت بے صبری سے تقدیری فیصلے نہیں ٹلتے اور مصیبت پر ناراضی کے اظہار سے ناراضی ہی ملتی ہے۔ رسول اللہe کا فرمان ہے:
’’جو (تقدیری فیصلوں پر)اظہار ناراضی کرے تو اس کے لئے اللہ کی طرف سے بھی ناراضی ہے۔‘‘ (الترمذی)
اسی طرح اللہ کے راستے سے قولاً یا عملاً روکنا بھی تباہی اور غضب الٰہی کا باعث ہے، فرمانِ باری تعالی ہے:
{وَالَّذِینَ یُحَآجُّونَ فِی اللّٰہِ مِنْ بَعْدِ مَا اسْتُجِیبَ لَــہٗ حُجَّتُہُمْ دَاحِضَۃٌ عِنْدَ رَبِّہِمْ وَعَلَیْہِمْ غَضَبٌ وَّلَہُمْ عَذَابٌ شَدِیدٌ} (الشوریٰ: ۱۶)
’’جو لوگ اللہ کی دعوت تسلیم کر لئے جانے کے بعد اللہ کے متعلق جھگڑا کرتے ہیں‘ ان کی حجت ان کے پروردگار کے ہاں کالعدم ہے ان پر اللہ کا غضب ہے اور ان کے لئے سخت عذاب ہے۔‘‘
اس آیت کی تفسیر میں سیدنا ابن عباسw کہتے ہیں:
’’اللہ اور رسول اللہ پر مومنوں کے ایمان لانے کے بعد انہیں راہ ہدایت سے روکنے اور دوبارہ سے جاہلیت میں لے جانے کے لئے انہوں نے جھگڑا شروع کر دیا ۔‘‘
حاصل کردہ علم پر عمل نہ کرنے والا بھی ان لوگوں میں شامل ہے جن پر اللہ کا غضب ہے، مسلمانوں کو نماز کی ہر رکعت میں یہ دعا کرنے کا حکم دیا گیا ہے کہ اللہ تعالی انہیں ایسے لوگوں سے اور ان کی روش سے بچا لے ۔
اللہ تعالیٰ نے والدین کے حقوق کو خصوصی تحفظ دیا کیونکہ ان کی شان بہت اعلی ہے، نیز اپنی رضا مندی کو والدین کی رضا مندی سے منسلک فرما دیا، ایسے ہی اپنی ناراضی کو بھی ان کی ناراضی سے نتھی کر دیا۔ سیدنا عبد اللہ بن عمروw کہتے ہیں کہ
’’رب کی رضا مندی والد کی رضا مندی میں ہے اور رب کی ناراضی والد کی ناراضی میں ہے۔‘‘ (الترمذی)
مسلمان کی جان کو مکمل تحفظ حاصل ہے، اسی لیے مسلمان کو قتل کرنے والا شخص اللہ کے غضب اور لعنت کا مستحق ٹھہرتا ہے۔ فرمانِ باری تعالی ہے:
{وَمَنْ یَّقْتُلْ مُؤْمِنًا مُتَعَمِّدًا فَجَزَآؤُہٗ جَہَنَّمُ خٰلِدًا فِیْہَا وَغَضِبَ اللّٰہُ عَلَیْہِ وَلَعَنَہٗ وَاَعَدَّ لَـــہٗ عَذَابًا عَظِیمًا} (النساء: ۹۳)
’’اور جو شخص کسی مومن کو دیدہ دانستہ قتل کرے تو اس کی سزا جہنم ہے جس میں وہ ہمیشہ رہے گا۔ اس پر اللہ کا غضب اور اس کی لعنت ہے اور اللہ نے اس کے لیے بہت بڑا عذاب تیار کر رکھا ہے۔‘‘
مسلمانوں کی دولت کو بھی مکمل تحفظ حاصل ہے، اسی لیے مسلمان کی دولت پر ہاتھ صاف کرنے والے کے لئے بھی شدید وعید ہے۔ رسول اللہe کا فرمان ہے:
’’جس نے مالی معاملات میں قسم اس لیے اٹھائی کہ اس کے ذریعے سے کسی مسلمان کا مال ہتھیا لے تو اللہ کے ساتھ اس کی ملاقات اس حالت میں ہو گی کہ اللہ تعالی اس پر غضبناک ہو گا۔‘‘ (متفق علیہ)
اگر کوئی جھوٹی عورت اپنے خاوند سے لعان کرے تو وہ ہمیشہ اللہ کے غضب میں رہتی ہے۔ کیونکہ اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{وَالْخَامِسَۃَ اَنَّ غَضَبَ اللّٰہِ عَلَیْہَا اِنْ کَانَ مِنَ الصَّادِقِینَ} (النور: ۹)
’’اور پانچویں قسم یہ کہ اللہ کا اس عورت پر غضب نازل ہو، اگر مرد اپنے دعوے میں سچا ہے۔‘‘
ظلم کے لئے کسی کی مدد کرنے والے پر بھی اللہ تعالی غضبناک ہوتا ہے۔ رسول اللہe کا فرمان ہے:
’’جو کسی جھگڑے میں کسی کی ناحق مدد کرے یا ظلم کرنے کے لئے معاونت کرے تو اللہ تعالی اس پر اس وقت تک غضبناک رہے گا یہاں تک کہ وہ اپنی اس حرکت باز آ جائے۔‘‘ (ابن ماجہ)
زبان لوگوں کے ہاں ایک معیار ہے؛ اسی لیے ممکن ہے کہ ایک ہی بول انسان کی کامرانی یا نامرادی کا سبب بن جائے۔ آپe کا فرمان ہے:
’’تم میں سے کوئی اللہ تعالی کو غضبناک کرنے والی بات بول دیتا ہے، اور اس کو یہ معلوم نہیں ہوتا کہ اس کا کیا اثر ہو گا ، لیکن اللہ تعالی اس پر ملنے کے دن تک اپنا غضب لکھ دیتا ہے۔‘‘ (جامع الترمذی)
دشمن سے مڈ بھیڑ کے دوران میدان کار زار سے پیٹھ پھیر کر بھاگنا بھی غضب الٰہی کا موجب ہے، اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{وَمَنْ یُوَلِّہِمْ یَوْمَپذٍ دُبُرَہٗ اِلَّا مُتَحَرِّفًا لِّقِتَالٍ اَوْ مُتَحَیِّزًا اِلَی فِئَۃٍ فَقَدْ بَآئَ بِغَضَبٍ مِنَ اللّٰہِ وَمَاْوَاہُ جَہَنَّمُ وَبِئْسَ الْمَصِیرُ} (الانفال: ۱۶)
’’اور اس دن پیٹھ پھیرنے والا شخص اللہ کے غضب میں آگیا۔ اس کا ٹھکانا دوزخ ہوگا اور وہ بری جائے بازگشت ہے ، الا یہ کہ وہ کوئی جنگی چال چل رہا ہو یا مڑ کر اپنی فوج کو ملنا چاہتا ہو۔‘‘
شکر ادا کرنا نعمت کا حق ہے، جبکہ اس نعمت پر تکبر اور حقیقی نعمت کنندہ کو بھول جانے کی سزا دنیا میں فوری مل جاتی ہے۔ فرمانِ باری تعالی ہے:
{کُلُوا مِنْ طَیِّبَاتِ مَا رَزَقْنَاکُمْ وَلَا تَطْغَوْا فِیہِ فَیَحِلَّ عَلَیْکُمْ غَضَبِیْ وَمَنْ یَحْلِلْ عَلَیْہِ غَضَبِی فَقَدْ ہَوٰی} (طٰہٰ: ۸۱)
’’جو پاکیزہ چیزوں کا تمہیں رزق دیا ہے اسے کھاؤ اور کھا کر سرکشی نہ کرو۔ ورنہ تم پر میرا غضب نازل ہوگا اور جس پر میرا غضب اترا وہ تباہ ہو گیا۔‘‘
اللہ تعالی کو غضبناک کرنے والے کام کے مرتکب شخص کے ساتھ بغض رکھنا واجب اور اس سے تعلقات بنانا حرام ہے۔ اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{یٰٓاَیُّہَا الَّذِینَ اٰمَنُوْا لَا تَتَوَلَّوْا قَوْمًا غَضِبَ اللّٰہُ عَلَیْہِمْ} (الممتحنۃ: ۱۳)
’’اے ایمان والو! ایسے لوگوں کو دوست نہ بناؤ جن پر اللہ کا غضب ہوا۔‘‘
لوگوں کی ذمہ داری بنتی ہے کہ موت کے بعد کی تیاری میں زیادہ سے زیادہ نیک عمل کریں؛ کیونکہ اللہ تعالی کا سب سے سخت غضب روزِ قیامت ظاہر ہو گا، اسی لیے آدم، نوح ، ابراہیم ، موسی اور عیسیo جیسے انبیائے کرام بھی اس سخت صورت حال میں پکار اٹھیں گے:
’’بلاشبہ! میرا پروردگار آج اتنا غضبناک ہے کہ اس سے پہلے کبھی نہیں ہوا، بلکہ آج کے بعد کبھی بھی اتنا غضبناک نہیں ہوگا۔‘‘ (متفق علیہ)
روزِ قیامت اللہ تعالی کے شدید غضبناک ہونے کی اثرات پر امام نووی رحمہ اللہ کہتے ہیں:
’’اس دن گناہگاروں سے انتقام، لوگوں کو نظر آنے والا درد ناک عذاب، اسی طرح میدان محشر میں لوگوں کو پیش آنے والی ایسی سختی اور ہولناکی کہ نہ کبھی ماضی میں ہوئی اور نہ ہی مستقبل میں ہوگی، یہ سب اللہ کے غضب کے اثرات ہیں۔‘‘
ان تمام تر تفصیلات کے بعد مسلمانو! اللہ تعالی بہت مضبوط اور قوت والا ہے، اللہ نے اپنے بندوں کو اپنے غضب سے خبردار بھی کر دیا اور فرمایا:
{وَیُحَذِّرُکُمُ اللَّہُ نَفْسَہُ} (آل عمران: ۲۸)
’’اور اللہ تمہیں اپنے آپ سے خبردار کرتا ہے۔‘‘
لوگوں کو اللہ تعالی کے حلم کے دھوکے میں نہیں رہنا چاہیے۔ جب اللہ تعالی کسی پر غضبناک ہو کر سزا کا حکم جاری کر دے تو اس کے فیصلے کو کوئی نہیں ٹال سکتا؛ چنانچہ اگر لوگ بد اعمال کر کے بھی اللہ تعالی کی نعمتیں حاصل کرتے رہیں تو یہ اللہ تعالی کی طرف سے ڈھیل ہے۔ انہی کے بارے میں اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{وَأُمْلِی لَہُمْ إِنَّ کَیْدِی مَتِینٌ} (القلم: ۴۵)
’’اور میں انہیں ڈھیل دے رہا ہوں، بیشک میری تدبیر بہت مضبوط ہے۔‘‘
تاہم اگر لوگ اللہ کی طرف رجوع کر لیں تو اللہ تعالی ان کے لئے توبہ اور بھلائی کے دروازے کھول دے گا اور ان سے راضی ہو جائے گا۔ ارشاد ربانی ہے:
{اَفَمَنِ اتَّبَعَ رِضْوَانَ اللّٰہِ کَمَنْ بَآءَ بِسَخَطٍ مِنَ اللّٰہِ وَمَاْوَاہُ جَہَنَّمُ وَبِئْسَ الْمَصِیرُ}
’’بھلا جو شخص اللہ کی رضا کے پیچھے چل رہا ہو وہ اس شخص جیسا ہو سکتا ہے جو اللہ کے غضب میں گرفتار ہو اور اس کا ٹھکانا جہنم ہو؟ اور جہنم تو بہت برا ٹھکانا ہے۔‘‘ (آل عمران: ۱۶۲)
دوسرا خطبہ
حمد وصلوٰۃ کے بعد:
مسلمانو! اطاعت گزاری رضائے الٰہی کی موجب ہے، اسی کی بدولت انسان اللہ کی رحمت پاتا ہے، اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{وَرَحْمَتِیْ وَسِعَتْ کُلَّ شَیْئٍ فَسَاَکْتُبُہَا لِلَّذِینَ یَتَّقُونَ وَیُؤْتُونَ الزَّکَاةَ وَالَّذِینَ ہُمْ بِاٰیٰتِنَا یُؤْمِنُونَ} (الاعراف: ۱۵۶)
’’میری رحمت ہر چیز سے وسیع ہے۔ لہٰذا جو لوگ تقوی اپناتے ہیں، زکاۃ دیتے ہیں اور ہماری آیات پر ایمان لاتے ہیں ان کے لئے میں رحمت ہی لکھوں گا۔‘‘
رحمتِ الٰہی کی وسعت میں یہ بھی شامل ہے کہ رحمت؛ غضب سے پیش قدم ہوتی ہے۔ رسول اللہe کا فرمان ہے:
’’اللہ تعالی نے مخلوقات پیدا کرنے سے پہلے ایک تحریر لکھی ہے کہ یقینا میری رحمت میرے غضب سے پیش قدم ہے۔ یہ تحریر اللہ کے پاس عرش کے اوپر لکھی ہوئی ہے۔‘‘ (بخاری)
غضب الٰہی سے اللہ کی پناہ مانگنا اللہ کے حکم سے تحفظ کا باعث بن سکتا ہے، اسی لیے رسول اللہe کی دعا میں شامل تھا کہ
[اَللَّہُمَّ إِنِّیْ أَعُوْذُبِکَ بِرِضَاکَ مِنْ سَخَطِکَ]
’’یا اللہ! میں تیری رضا کے ذریعے تیرے غضب سے تیری پناہ چاہتا ہوں۔‘‘ (مسلم)
اس لیے دانش مند مسلمان رضائے الہی پانے کے لئے خوب محنت کرتا ہے اور اپنے آپ کو ہر ایسے کام سے بچاتا ہے جو اللہ کو غضبناک کریں۔
تم عظمت والے جلیل القدر اللہ کا ذکر کرو تو وہ بھی تمہیں یاد رکھے گا، اللہ تعالی کی نعمتوں کا شکر ادا کرو تو وہ تمہیں اور زیادہ دے گا، یقینا اللہ کا ذکر بہت بڑی عبادت ہے، تم جو بھی کرتے ہو اللہ تعالی بخوبی جانتا ہے ۔


1 comment: