شکر کے آداب‘ طریقے اور فوائد 31-2019 - ھفت روزہ اھل حدیث

Breaking

Saturday, August 17, 2019

شکر کے آداب‘ طریقے اور فوائد 31-2019


شکر کے آداب‘ طریقے اور فوائد

امام الحرم المکی فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر صالح بن حمید d
ترجمہ: جناب محمد فرہاد سالم
حمد و ثناء کے بعد!
اے لوگو! میں خود کو اور آپ سب کو تقوی کی وصیت کرتا ہوں ۔ اللہ کا تقوی اختیار کرو ۔ اللہ آپ پر رحم فرمائے۔
جان لو! جو شخص اپنے نفس کو اللہ کے لئے عمل کرنے کا عادی بناتا ہے توا س کا عمل اخلاص سے بھر پور ہوتا ہے اور جو شخص خواہشات نفس کے لئے عمل کرتا ہے اس کے لئے اخلاص مشکل ہو جاتا ہے ۔
بلند حوصلگی کامیابی کا راز اور کم ہمتی ناکامی کا راستہ ہے‘ نیز نعمتوں کی حفاظت کا ثمرہ نعمتیں ہی ہیں ۔ سست آدمی آرام سے اور بے پروا شخص خوشی سے محروم ہوتا ہے۔ جو سر توڑ محنت نہیں کرتا اس کو لذت بھی نہیں ملتی۔
انسانی نفس نیکی میں رغبت اور بے رغبتی کا میلان رکھتا ہے ، پس جب نفس کا میلان نیکی کی طرف ہو تو خوب عبادت اور نیک کاموں کے عادی بنو ، اسی طرح جب نفس میں بے رغبتی ہو تو فرائض و واجبات کو لازما ادا کرو ۔
اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{اِنَّ الَّذِینَ قَالُوا رَبُّنَا اللّٰہُ ثُمَّ اسْتَقَامُوْا تَتَنَزَّلُ عَلَیْہِمُ الْمَلآپکَة اَلَّا تَخَافُوا وَلَا تَحْزَنُوا وَاَبْشِرُوا بِالْجَنَّة الَّتِی کُنْتُمْ تُوعَدُونَ٭ نَحْنُ اَوْلِیَآؤُکُمْ فِی الْحَیَاة الدُّنْیَا وَفِی الاٰخِرَة وَلَکُمْ فِیْہَا مَا تَشْتَہِی اَنْفُسُکُمْ وَلَکُمْ فِیہَا مَا تَدَّعُونَ٭ نُزُلًا مِّنْ غَفُورٍ رَحِیمٍ}(فصلت)
’’جن لوگوں نے کہا کہ ہمارا پروردگار اللہ ہے پھر اس پر ڈٹ گئے ان پر فرشتے نازل ہوتے ہیں اور ان سے کہتے ہیں۔ نہ ڈرو اور نہ غمگین ہو اور اس جنت کی خوشی مناؤ جس کا تم سے وعدہ کیا جاتا ہے ہم دنیا کی زندگی میں بھی تمہارے دوست ہیں اور آخرت میں بھی۔ وہاں تمہارا جو جی چاہے گا تمہیں ملے گا اور جو کچھ مانگو گے تمہارے لیے ہو گا۔ یہ بخشنے والے مہربان کی طرف سے مہمانی ہو گی۔‘‘
مسلم اقوام! عظیم اخلاق اور عمدہ عبادات میں سے ایک عبادت کہ جس کا اللہ نے حکم دیا اور اس کی مخالفت سے منع کیا‘ اس کے ادا کرنے والوں کی تعریف کی اور ان کو اپنے خواص میں شمار کیا ، نیز اس کو اپنی خلقت اور حکم کا مقصد ٹھہرایا۔ اسی طرح اس کے کرنے والوں سے بہترین بدلے کا وعدہ کیا، اور اسے اپنے فضل میں اضافے کا باعث ، نعمتوں اور عطاؤں کا محافظ قرار دیا ہے ، اس پر عمل کرنے والے ہی اس کے حقیقی نفع یاب ہیں ۔ ساتھ ساتھ یہ کہ اللہ تعالی نے اپنے ناموں میں سے ایک نام کا انتخاب اس سے کیا ہے ، لیکن بندوں میں اسے انجام دینے والے تھوڑے ہیں ۔
یہ تمام شرف و فضیلت اور بلندی اس عمدہ عبادت شکر اور اس کے کرنے والوں کی ہے ۔
اللہ کے بندو! اللہ عزوجل کا فرمان ہے:
{وَاشْکُرُوا لِلّٰہِ إِنْ کُنْتُمْ اِیَّاہُ تَعْبُدُونَ}
’’اور اللہ کا شکر کرو، اگر تم صرف اس کی عبادت کرتے ہو۔‘‘ (البقرۃ: ۱۷۲)
چنانچہ پتا چلا کہ کما حقہ عبادت صرف شکر گزار بندے ہی کرتے ہیں۔ اور اللہ عزوجل کا فرمان ہے:
{وَاشْکُرُوا لِی وَلَا تَکْفُرُونِ} (البقرة: ۱۵۲)
’’میرا شکر کرو اور میری ناشکری مت کرو۔‘‘
اور اللہ عزوجل کا فرمان ہے:
{وَإِذْ تَأَذَّنَ رَبُّکُمْ لَئِنْ شَکَرْتُمْ لَاَزِیدَنَّکُمْ وَلَپنْ کَفَرْتُمْ إِنَّ عَذَابِی لَشَدِید} (إبراہیم: ۷)
جب تمہارے رب نے صاف اعلان کر دیا کہ بے شک اگر تم شکر کرو گے تو میں ضرور تمھیں زیادہ دوں گا اور اگر تم ناشکری کرو گے تو بلاشبہ میرا عذاب یقینا بہت سخت ہے۔ اللہ عزوجل کا فرمان ہے:
{وَقَلِیلٌ مِنْ عِبَادِیَ الشَّکُورُ} (سبأ: ۱۳)
’’اور بہت تھوڑے میرے بندوں میں سے شکر گزار ہیں۔‘‘
اللہ کے بندو! شکر عبادت گزاروں کے معاملات میں پائیدار معاملہ ، اور نیک بندوں کے دلوں میں راسخ منہج ہے کہ جس سے ان کے دل بھرے رہتے اور زبانیں تر رہتی ہیں ، نیز اعضا سے شکر گزاری ظاہر ہوتی ہے ۔
اللہ تعالیٰ نے اپنے پہلے نبی نوح (u) کا وصف اس طرح بیان کیا:
{اِنَّہٗ کَانَ عَبْدًا شَکُورًا}(الإسراء: ۳)
’’بے شک وہ بہت شکر گزار بندہ تھا۔‘‘
اور اپنے خلیل صاحب ملت حنیف سیدنا ابراہیم (u) کے بارے میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
{شَاکِرًا لِاَنْعُمِہِ اجْتَبَاہُ وَہَدَاہُ إِلٰی صِرَاطٍ مُّسْتَقِیمٍ} (النحل: ۱۲۱)
’’وہ اللہ کی نعمتوں کے شکر گزار تھے‘ اللہ نے انہیں منتخب کر لیا اور سیدھی راہ دکھا دی۔‘‘
موسیٰ (u) کے بارے میں اللہ تعالی نے فرمایا:
{وَإِذْ قَالَ مُوسَی لِقَوْمِہِ اذْکُرُوا نِعْمَة اللَّہِ عَلَیْکُمْ إِذْ أَنْجَاکُمْ مِنْ آلِ فِرْعَوْنَ یَسُومُونَکُمْ سُوءَ الْعَذَابِ وَیُذَبِّحُونَ أَبْنَاء َکُمْ وَیَسْتَحْیُونَ نِسَاء َکُمْ وَفِی ذَلِکُمْ بَلَاء ٌ مِنْ رَبِّکُمْ عَظِیمٌ٭ وَإِذْ تَأَذَّنَ رَبُّکُمْ لَئِنْ شَکَرْتُمْ لَأَزِیدَنَّکُمْ وَلَئِنْ کَفَرْتُمْ إِنَّ عَذَابِی لَشَدِیدٌ٭}(إبراہیم: ۶-۷)
’’اور جب موسیٰ نے اپنی قوم سے کہا کہ تم اپنے اوپر اللہ کی نعمت یاد کرو، جب اس نے تمہیں فرعون کی آل سے نجات دی، جو تمہیں برا عذاب دیتے تھے اور تمہارے بیٹے بری طرح ذبح کرتے اور تمہاری عورتوں کو زندہ رکھتے تھے اور اس میں تمہارے رب کی طرف سے بہت بڑی آزمائش تھی۔ جب تمہارے رب نے صاف اعلان کر دیا کہ بے شک اگر تم شکر کرو گے تو میں ضرور تمہیں زیادہ دوں گا اور اگر تم ناشکری کرو گے تو بلاشبہ میرا عذاب یقینا بہت سخت ہے۔‘‘
سلیمان (u) اپنے اوپر اللہ تعالی کی خاص نعمتیں اور اللہ کی طرف سے تابع کردہ مخلوقات کو دیکھتے ہوئے فرمانے لگے :
{فَتَبَسَّمَ ضَاحِکًا مِنْ قَوْلِہَا وَقَالَ رَبِّ اَوْزِعْنِیٓ اَنْ اَشْکُرَ نِعْمَتَکَ الَّتِیٓ اَنْعَمْتَ عَلَیَّ وَعَلٰی وَالِدَیَّ وَاَنْ اَعْمَلَ صٰلِحًا تَرْضَاہُ وَاَدْخِلْنِیْ بِرَحْمَتِکَ فِیْ عِبٰدِکَ الصّٰلِحِینَ} (النمل: ۱۹)
’’تو سلیمان (u) اس کی بات سے ہنستے ہوئے مسکرائے اور کہا اے میرے رب! مجھے توفیق دے کہ میں تیری نعمت کا شکر کروں، جو تو نے مجھ پر اور میرے ماں باپ پرکی ہے اور یہ کہ میں نیک عمل کروں، جسے تو پسند کرے اور اپنی رحمت سے مجھے اپنے نیک بندوں میں داخل فرما۔‘‘
جہاں تک ہمارے پیارے نبی محمدe کا ذکر ہے تو اللہ تعالی نے آپ کے اگلے پچھلے سارے گناہ معاف فرما دئیے تھے ، لیکن اس کے باوجود آپe رات کو اللہ کے لئے قیام کرتے یہاں تک کہ آپ کے قدم مبارک سوج جاتے ، اور آپ فرماتے:
{اَفَلَا اَکُونُ عَبْدًا شَکُورًا}
’’کیا میں شکر گزار بندہ نہ بنوں۔‘‘
بھائیو! شکر بندے کی طرف سے اللہ تعالی کے احسانات کا اعتراف ، نیز جان ، مال اور اہل و عیال میں دنیا و آخرت کی خیر اور بھلائیوں کا اقرار ہے۔ شکر اس بات کی دلیل ہے کہ بندہ اپنے رب سے راضی ہے ، شکر دل کی زندگی اور حیات ہے ، نیز شکر کے ذریعے موجود نعمت کو محفوظ اور مفقود نعمت کو حاصل کیا جاتا ہے۔ مومن کا سارا معاملہ خیر پر مشتمل ہے ،جب اس کو خوشی ملتی ہے شکر ادا کرتا ہے تو اس میں اس کی بہتری ہے ، اور اگر اس کو کوئی تکلیف لاحق ہوتی ہے اور وہ صبر کرتا ہے تو اس میں بھی اس کے لئے بہتری ہے، اور یہ چیز صرف اور صرف مومن کو حاصل ہے۔
شکر پاکیزہ نفس ، دل کی طہارت ، سینے کی سلامتی اور کمال عقل کی دلیل ہے ۔ بلکہ اللہ تعالی نے مخلوقات کو پیدا بھی اسی لئے کیا کہ اس کا شکر ادا کریں ۔ چنانچہ اللہ عزوجل نے فرمایا:
{وَاللّٰہُ اَخْرَجَکُمْ مِنْ بُطُونِ اُمَّہَاتِکُمْ لَا تَعْلَمُونَ شَیْئًا وَجَعَلَ لَکُمُ السَّمْعَ وَالْاَبْصَارَ وَالْأَفْئِدَة لَعَلَّکُمْ تَشْکُرُونَ} (النحل: ۷۸)
’’اور اللہ نے تمہیں تمہاری ماؤں کے پیٹوں سے اس حال میں نکالا کہ تم کچھ نہ جانتے تھے اور اس نے تمھارے لیے کان اور آنکھیں اور دل بنا دئیے، تاکہ تم شکر کرو۔‘‘
شکر انسان کے لئے اللہ کی پہلی وصیت ہے، چنانچہ فرمایا:
{وَوَصَّیْنَا الاِنْسَانَ بِوَالِدَیْہِ حَمَلَتْہُ اُمُّہُ وَہْنًا عَلَی وَہْنٍ وَفِصَالُہُ فِی عَامَیْنِ اَنِ اشْکُرْ لِی وَلِوَالِدَیْکَ إِلَیَّ الْمَصِیرُ} (لقمان: ۱۴)
’’اور ہم نے انسان کو اس کے ماں باپ کے بارے میں تاکید ی حکم دیا، اس کی ماں نے کمزوری پر کمزوری کی حالت میں اسے اٹھائے رکھا اور اس کا دودھ چھڑانا دو سال میں ہے کہ میرا شکر کر اور اپنے ماں باپ کا۔ میری ہی طرف لوٹ کر آنا ہے۔‘‘
اللہ تعالی نے بتایا کہ اس کی رضا اس کی شکر گزاری میں ہے، چنانچہ فرمایا:
{وَاِنْ تَشْکُرُوا یَرْضَہُ لَکُمْ} (الزمر: ۷)
’’اور اگر تم شکر کرو تو وہ اسے تمہارے لیے پسند کرے گا۔‘‘
اسی طرح شکر کو عذاب سے بچاؤ کا سبب بنایا، چنانچہ اللہ عزوجل نے فرمایا:
{مَا یَفْعَلُ اللّٰہُ بِعَذَابِکُمْ اِنْ شَکَرْتُمْ وَاٰمَنْتُمْ وَکَانَ اللّٰہُ شَاکِرًا عَلِیمًا} (النساء: ۱۴۷)
’’اللہ تمہیں عذاب دے کر کیا کرے گا، اگر تم شکر کرو اور ایمان لے آؤ۔ اور اللہ ہمیشہ سے قدر کرنے والا، سب کچھ جاننے والا ہے۔‘‘
بلکہ اللہ تعالیٰ نے تمام لوگوں میں شکر گزاروں پر خاص احسان کیا۔ چنانچہ اللہ عزوجل نے فرمایا:
{وَکَذٰلِکَ فَتَنَّا بَعْضَہُمْ بِبَعْضٍ لِیَقُولُوا اَہٰؤُلَآئِ مَنَّ اللّٰہُ عَلَیْہِمْ مِنْ بَیْنِنَا اَلَیْسَ اللّٰہُ بِاَعْلَمَ بِالشَّاکِرِینَ} (الأنعام: ۵۳)
’’اس طرح ہم نے بعض لوگوں کے ذریعہ دوسروں کو آزمائش میں ڈالا ہے تاکہ (وہ انہیں دیکھ کر) کہیں کہ ’’کیا ہم میں سے یہی لوگ ہیں جن پر اللہ نے احسان کیا ہے؟‘‘ (دیکھو) کیا اللہ تعالیٰ اپنے شکر گزار بندوں کو ان سے زیادہ نہیں جانتا؟‘‘
ایمانی بھائیو! شکر کے تین ارکان ہیں۔ نعمت کنندہ کے ساتھ محبت اور باطنی طور پر نعمتوں کا اعتراف نیز ظاہری طور پر ان کے اظہار کے ساتھ اللہ کی تعریف کرنا اور نعمتوں کو اللہ کی اطاعت اور رضا کے کاموں میں لگاتے ہوئے اس کی نا فرمانی سے بچنا۔ تین نعمتیں اعلیٰ ترین ہیں:
1          اسلام کی نعمت کہ اس کے بغیر نعمت مکمل نہیں ہو سکتی ۔
2          عافیت کی نعمت کہ اس کے بغیر زندگی مکمل نہیں ہو سکتی۔
3          رضا کی نعمت کے بغیر زندگی خوشگوار نہیں ہو سکتی۔
حسن بصری (ش) فرماتے ہیں: عافیت کے ساتھ شکر ایسی خیر ہے کہ جس میں کوئی شر نہیں ۔
کتنے ہی آزمائشوں میں ہونے کے باوجود شکر گزار ہوتے ہیں اور کتنے ہی لوگ نعمتوں میں ہونے کے باوجود شکر گزار نہیں ہوتے، پس جب اللہ عزوجل سے سوال کرو تو شکر کے ساتھ عافیت کا سوال کرو۔
مسلمانو! صحت و بیماری ہو یا جوانی و بڑھاپا، تنگ دستی و کشادگی ہو یا مشغولیت و فراغت ۔ اسی طرح خوشحالی یا تنگ حالی ہو بیداری یا نیند ، سفر و حضر ہو یا اجتماعی و انفرادی حالت ہو، نیز یہ کہ کھڑے بیٹھے اور پہلو کے بل ہر حالت میں انسان پر اللہ کا شکر واجب ہے۔
سیدنا ابو درداء (t) فرماتے ہیں :
کم علم شخص ، صرف کھانے پینے کو اپنے اوپر اللہ کی نعت سمجھتا ہے ، اس لئے کہ اللہ کی نعمتیں تو دائمی اور اس کی نوازشیں لگاتار ہیں۔ اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{وَاٰتَاکُمْ مِنْ کُلِّ مَا سَاَلْتُمُوہُ وَاِنْ تَعُدُّوا نِعْمَتَ اللّٰہِ لَا تُحْصُوہَا اِنَّ الاِنْسَانَ لَظَلُومٌ کَفَّارٌ} (إبراہیم: ۳۴)
’’اور جو کچھ بھی تم نے اللہ سے مانگا وہ اس نے تمہیں دیا۔ اور اگر اللہ کی نعمتیں گننا چاہو تو کبھی ان کا حساب نہ رکھ سکو گے۔ انسان تو ہے ہی بے انصاف اور ناشکرا۔‘‘
اللہ عزوجل کا فرمان ہے:
{اَلَمْ تَرَوْا اَنَّ اللّٰہَ سَخَّرَ لَکُمْ مَا فِی السَّمٰوَاتِ وَمَا فِی الْاَرْضِ وَاَسْبَغَ عَلَیْکُمْ نِعَمَہٗ ظَاہِرَة وَّبَاطِنَة} (لقمان: ۲۰)
’’کیا تم نے نہیں دیکھا کہ اللہ نے جو کچھ آسمانوں میں اور جو زمین میں ہے تمھاری خاطر مسخر کر دیا اور تم پر اپنی کھلی اور چھپی نعمتیں پوری کر دیں۔‘‘
اللہ آپ پر رحم فرمائے! اللہ عزوجل کا فضل و لطف یہ ہے کہ وہ اپنے بندو کے شکر کو قبول کرتا ہے اور وہ بہت بخشنے والا اور قدردان ہے، پس اللہ نے کتے کو پانی پلانے والے کی قدر کی اور اس کو معاف کر دیا ، تو جو شخص مسلمانوں پر احسان، محتاجوں اور بے بسوں پر صدقہ کرے ،نیز کمزوروں پر رحم کرے گا تو اللہ اس کے ساتھ کیا ہی اچھا معاملہ کرے گا۔
اسی طرح جس شخص نے راستے سے تکلیف دہ چیز کو ہٹایا تو اللہ نے اس کی قدر کی اور اسے معاف کر دیا، تو جو شخص مسلمانوں کے معاملات میں آسانی کرے ، ان کے غم دور کرے اور پریشانیاں ختم کرے تو اللہ اس کے ساتھ کیا معاملہ فرمائے گا؟
اللہ عزوجل کا کرم ہے کہ اس نے لوگوں کے شکر کو اپنا شکر قرار دیا ۔ حدیث میں ہے آپe نے فرمایا:
[لَا یَشْکُرُ اللَّہَ مَنْ لَا یَشْکُرُ النَّاسَ۔]
’’جو شخص لوگوں کا شکریہ ادا نہیں کرتا وہ اللہ کا بھی شکر گزار نہیں ہوتا۔‘‘
اسی طرح اس کے کرم میں یہ بھی ہے کہ
{وَمَنْ شَکَرَ فَإِنَّمَا یَشْکُرُ لِنَفْسِہِ} (النمل: ۴۰)
’’اور جو شکر کرتا ہے تو وہ اپنے ہی لیے شکر کرتا ہے۔‘‘
اللہ تعالی کا فرمان ہے:
{وَاٰیَة لَّہُمُ الْاَرْضُ الْمَیْتَة اَحْیَیْنَاہَا وَاَخْرَجْنَا مِنْہَا حَبًّا فَمِنْہُ یَاْکُلُونَ٭ وَجَعَلْنَا فِیْہَا جَنَّاتٍ مِّنْ نَّخِیْلٍ وَّاَعْنَابٍ وَفَجَّرْنَا فِیْہَا مِنَ الْعُیُوْنِ٭ لِیَأْکُلُوا مِنْ ثَمَرِہٖ وَمَا عَمِلَتْہُ اَیْدِیْہِمْ اَفَلَا یَشْکُرُونَ٭ سُبْحٰنَ الَّذِیْ خَلَقَ الْاَزْوَاجَ کُلَّہَا مِمَّا تُنْبِتُ الْاَرْضُ وَمِنْ اَنْفُسِہِمْ وَمِمَّا لَا یَعْلَمُونَ} (یٰسٓ: ۳۳-۳۶)
’’اور ایک نشانی ان کے لیے مردہ زمین ہے، ہم نے اسے زندہ کیا اور اس سے غلہ نکالا تو وہ اسی میں سے کھاتے ہیں۔ ا ور ہم نے اس میں کھجوروں اور انگوروں کے کئی باغ بنائے اور ان میں کئی چشمے جاری کیے تاکہ وہ اس کے پھل سے کھائیں، حالانکہ اسے ان کے ہاتھوں نے نہیں بنایا، تو کیا وہ شکر نہیں کرتے۔ وہ پاک ذات ہے جس نے ہر چیز کے جوڑے پیدا کیے خواہ وہ زمین کی اگائی ہوئی چیزیں ہوں، خواہ خود ان کے نفوس ہوں خواہ وہ (چیزیں) ہوں جنہیں یہ جانتے بھی نہیں۔‘‘
دوسرا خطبہ
حمد وصلوٰۃ کے بعد:
اللہ آپ کو توفیق دے! یاد رکھو شکر کے وسائل کا کوئی شمار نہیں، نیکی کا اجر بڑھانے اور گناہوں کو ڈھانپنے پر اپنے رب کا شکر ادا کرو ۔
ابن تیمیہ (a) سے کسی آدمی نے کہا: آپ کی صبح کیسی ہوئی، تو انہوں نے فرمایا: میں نے دو نعمتوں میں صبح کی اور مجھے نہیں معلوم کہ ان میں سے کون سی افضل ہے۔
پہلی یہ کہ اللہ نے میرے بہت سے گناہوں کو چھپا دیا اب کوئی مجھے ان پر عار نہیں دلا سکتا۔ اور دوسری چیز محبت ہے جو اللہ نے ان لوگوں کے دلوں میں ڈال دی ہے جن تک میرا عمل نہیں پہنچا۔
اللہ کے بندو! اسی طرح نماز کے ذریعے بھی شکر ادا کیا جاسکتا ہے، نبیe رات کو قیام کرتے یہاں تک کہ آپ کے قدم مبارک سوج جاتے اور آپ فرماتے:
{اَفَلَا اَکُونُ عَبْدًا شَکُورًا}
’’کیا میں شکر گزار بندہ نہ بنوں۔‘‘
شکر روزے کے ذریعے بھی ادا کیا جا سکتا ہے۔ چنانچہ موسی (u) نے عاشوراء کے دن روزہ رکھا ، جب اللہ تعالی نے ان کو اور ان کی قوم کو فرعون اور اس کی قوم سے نجات دی، پھر ہمارے پیارے نبیe نے یہ روزہ رکھا اور یہود سے کہا: [نحن احق بموسی منکم] ’’ہم تم سے زیادہ موسیٰ (u) کے حق دار ہیں۔‘‘
اسی طرح سجدہ شکر کے ذریعے بھی شکر ادا کیا جاسکتا ہے ، چنانچہ مومن کو جب کوئی خیر کی خبر پہنچے یا اللہ اس پر کوئی انعام کرے تو وہ سجدہ شکر ادا کرے۔
چنانچہ جب جبریل (u) نے نبیe کو خبر دی کہ اللہ تعالی فرماتا ہے:
’’جو شخص آپ پر ایک دفعہ درود بھیجے گا تو اللہ تعالی اس کے بدلے میں اس پر دس رحمتیں نازل فرمائے گا۔‘‘
تو آپe نے سجدہ شکر ادا کیا۔ اسی طرح جب سیدنا ابوبکر صدیق (t) کو مسیلمہ کذاب کے قتل کی خبر ملی تو آپ نے سجدہ شکر کیا۔
سیدنا علی (t) نے الخارجی بن ثدیۃ کے قتل پر اور کعب بن مالکt نے توبہ قبول ہونے پر سجدہ شکر کیا۔
عبدالرحمن السلمی فرماتے ہیں: نماز ، روزہ اور ہر نیکی شکر ہے اور افضل شکر اللہ کی حمد ہے ۔
تقوی الٰہی اختیار کرو! اللہ آپ پر رحم فرمائے! جان لو نعمتوں کو شمار کرنا بھی شکر گزاری ہے ، نیز تحدیث نعمت، تعریف کرنا، اور قناعت بھی شکر گزاری ہے۔ اسی طرح زبان کو اللہ کے ذکر سے تر رکھنا بھی شکر گزاری ہے۔
جس نے کہا:
[مَنْ قَالَ حِینَ یُصْبِحُ: اللَّہُمَّ مَا اَصْبَحَ بِی مِنْ نِعْمَة فَمِنْکَ وَحْدَکَ، لَا شَرِیکَ لَکَ، فَلَکَ الْحَمْدُ، وَلَکَ الشُّکْرُ: فَقَدْ اَدَّی شُکْرَ یَوْمِہِ، وَمَنْ قَالَ مِثْلَ ذَلِکَ حِینَ یُمْسِی: فَقَدْ اَدَّی شُکْرَ لَیْلَتِہِ۔]
جس نے صبح کے وقت یہ کہہ لیا:
[اللہم أصبح بی من نعمة فمنک وحدک لا شریک لک فلک الحمد ولک الشکر]
’’اے اللہ! مجھے جو بھی نعمت حاصل ہے وہ تیرے اکیلے ہی کی طرف سے ہے ۔ تیرا کوئی شریک نہیں۔ پس تیری ہی حمد ہے اور تیرا ہی شکر ہے۔ ‘‘
تو اس نے اپنے اس دن کا شکر ادا کر لیا اور جس نے شام کے وقت اسی طرح کہہ لیا ، تو اس نے اپنی اس رات کا شکر ادا کر لیا ۔
یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما۔ یا اللہ اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما۔ یا اللہ اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما۔ شرک اور مشرکین کو ذلیل و رسوا فرما۔ نیز حد سے بڑھے ہوئے ، ملحدین، اور دین و ملت کے تمام دشمنوں کو تباہ و برباد فرما۔ آمین!


No comments:

Post a Comment