ختم نبوت ... اک گمنام مجاہد 35-2019 - ھفت روزہ اھل حدیث

Breaking

Saturday, September 21, 2019

ختم نبوت ... اک گمنام مجاہد 35-2019


ختم نبوت ... اک گمنام مجاہد

تحریر: جناب حافظ شاہد رفیق
انیسویں صدی کے اواخر میں ہندوستان پر قابض غیر ملکی استعمار نے ارضِ قادیان میں جعلی نبوت کا جو پودا کاشت کیا اور اس کی آبیاری کرتا رہا، اس کے آغاز ہی میں علمائے ربانیین اس کی حقیقت آشکار کرنے میں مصروف اور سادہ لوح عوام کو اس کے دام ہم رنگ زمین میں آنے سے بچاتے رہے، جن میں سب سے نمایاں نام ناصر السنہ علامہ محمد حسین بٹالوی (وفات: ۱۹۲۰ء) کا ہے۔ اس عالم بے بدل نے پورے ملک میں اس فتنے کو آشکارا کیا اور اکابر علماء کی تائید سے ۱۸۹۱ء میں ایک فتوائے تکفیر مرتب کیا جس میں متنبیِ قادیان کو دجال اور دائرہ اسلام سے خارج قرار دیا گیا۔بعد ازاں اس فتنے کو شیخ الاسلام مولانا ثناء اللہ امرتسری (وفات: ۱۹۴۸ء) نے منطقی انجام تک پہنچایا اور بالآخر مرزا قادیانی نے ان کے مقابلے میں عاجز آ کر دعا کی کہ جھوٹا سچے کی زندگی میں مر جائے۔ مرزا قادیانی کی یہ ’’اکلوتی دعا‘‘ تھی جو قبول ہوئی اور اس کے نتیجے میں وہ ۲۶ مئی ۱۹۰۸ء کو جہنم واصل ہوا، جبکہ مولانا امرتسری مرحوم اس کے بعد چالیس سال زندہ رہے اور قادیانی جغادریوں کو ناکوں چنے چبواتے رہے۔ اسی بارے میں مولانا ظفر علی خان (وفات: ۱۹۵۶ء) نے کہا تھا:
خدا شرمائے اس ’’ظالم‘‘ ثناء اللہ کو جس نے
نہ چھوڑا قبر میں بھی قادیانیت کے بانی کو
زیر نظر مضمون میں ہم شیخ الاسلام مولانا ثناء اللہ امرتسریa ہی کے ایک شاگرد اور بلند مرتبت اہلِ حدیث عالم حافظ محمد ابراہیم کمیر پوری (وفات: ۱۹۸۹ء) کی ان خدمات کا تذکرہ کرنا چاہتے ہیں جو انہوں نے۱۹۷۴ء کی تحریک ختم نبوت میں قادیانیوں کو غیر مسلم قرار دینے کے سلسلے میں انجام دیں اور حکومتی ایوانوں میں ختم نبوت کے اس عظیم مجاہد نے قادیانی خلیفہ اور اس کے حواریوں کا پامردی سے مقابلہ کیا۔ اس حوالے سے مختلف سیاسی جماعتوں کے قائدین اور مذہبی راہنماؤں کی طرف سے جو کاوشیں بروئے کار آئیں، ان کا ذکر تو ہم سنتے رہتے ہیں، لیکن اس مردِ مجاہد کی مساعی چونکہ ہماری نظروں سے اوجھل ہیں اور کیا اپنے اور کیا بے گانے، سبھی ان کے تذکرے میں غفلت کا مظاہرہ کرتے ہیں، اس لیے ذیل کی سطور میں ہم تحریک ختم نبوت ۱۹۷۴ء میں ان کی جہود پیش کرتے ہیں۔
ارضِ پاک میں آئینی طور پر اس گروہ کو غیر مسلم اقلیت قرار دینے کی پہلی آواز مولانا محمد حنیف ندوی (وفات: ۱۹۸۷ء) نے ۲ دسمبر ۱۹۴۹ء کو ہفت روزہ ’’الاعتصام‘‘ میں اٹھائی۔ اس جماعت کے خلاف پہلی تحریک فروری ۱۹۵۳ء میں برپا ہوئی جس میں دس ہزار اسلامیانِ پاکستان شہید ہوئے۔ دوسری مرتبہ مئی ۱۹۷۴ء میں اس گروہ کو غیر مسلم قرار دینے کی تحریک کا آغاز ہوا جو تین ماہ بعد ثمر آور ہوئی اور اس فرقے کو کافر ڈکلیئر کر دیا گیا۔
۲۹ مئی ۱۹۷۴ء کو ربوہ ریلوے اسٹیشن پر قادیانی غنڈوں کا نشتر کالج ملتان کے طلبہ پر تشدد اس تحریک کا نقطہ آغاز بن گیا اور جلد ہی یہ آواز ملک گیر تحریک کی شکل اختیار کر گئی کہ اس حادثے کے مجرم گرفتار کیے جائیں۔ اس کام کے لیے صمدانی کمیشن کے نام سے ایک انکوائری کمیٹی بنی، لیکن عوام کے احتجاج کی بدولت حالات نے ایسا پلٹا کھایا کہ فیصلہ ہوا کہ قومی اسمبلی میں قادیانیوں کی دینی حیثیت کو زیر بحث لایا جائے اور خلیفہ قادیانی مرزا ناصر کو گفتگو کا موقع دے کر سوال جواب کیے جائیں، تاکہ اس قضیے کو آئینی طور پر نمٹایا جا سکے۔
حافظ محمد ابراہیم کمیرپوریa نے اپنی کتاب ’’فسانہ قادیان‘‘ کے آغاز (ص: ۶۲) میں لکھا ہے کہ قومی اسمبلی نے ۳ جون ۱۹۷۴ء سے اس مسئلے کی تحقیق و تفتیش کا سلسلہ شروع کیا اور مکمل آزادی کے ساتھ قادیانیوں کو اپنا موقف اور اس کے دلائل پیش کرنے کی اجازت دی۔ اس سلسلے میں تمام اخراجات بھی حکومت نے خود برداشت کیے۔ ۳۰/۴۰ دن کی تحقیق کے نتیجے میں جب سارا مواد اکٹھا ہو گیا تو اگست کے دوسرے ہفتے سے پارلیمنٹ نے اس مسئلے پر باقاعدہ بحث و تمحیص کا سلسلہ شروع کیا۔ یہ کارروائی خفیہ طریقے سے انجام پاتی رہی۔
اگست ۷۴ء کے اوائل میں قادیانی خلیفہ مرزا ناصر نے اپنی صفائی میں ۱۲۰۰ صفحات کا طویل بیان قومی اسمبلی میں داخل کیا جس میں اس نے یہ تاثر دینے کی کوشش کی کہ قادیانی گروہ بھی دیگر اسلامی فرقوں کی طرح ایک مذہبی جماعت ہے۔ اس پر تحریک ختم نبوت کے زعماء اور اسمبلی کے ممبران نے مرزا ناصر کے بیان پر جرح کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس جرح کا اصل مقصد مرزائی کتب کی روشنی میں قادیانیوں کے اصل عقائد کا اظہار اور اس امر کی نشان دہی کرنا تھا کہ مرزا ناصر نے اپنے بیان میں جو کچھ کہا ہے، وہ حقائق کے خلاف اور صداقت کے منافی ہے۔ لیکن اس سلسلے میں ایک قانونی پیچیدگی یہ تھی کہ اس مکالمے میں صرف ممبرانِ اسمبلی ہی حصہ لے سکتے تھے اور وہ بھی اس طرح کہ اراکینِ اسمبلی جو سوال کرنا چاہیں، سکریننگ کمیٹی میں پیش کریں اور اس کے ساتھ مرزائی لٹریچر سے وہ عبارت مع حوالہ درج کریں جس کی بنا پر وہ یہ سوال کر رہے ہیں، پھر کمیٹی کے مطالبے پر اصل کتاب اور دستاویز بھی مہیا کریں۔ یہ کمیٹی جن سوالات کو معقول اور مدلل خیال کرے گی، وہ اٹارنی جنرل کو فراہم کرے گی اور وہ متعلقہ رکن اسمبلی کے حوالے سے مرزا ناصر سے جواب طلب کریں گے۔ ظاہر ہے کہ جرح کا یہ طریقہ بڑا پیچیدہ، مشکل اور طویل العمل تھا۔ ایک طرف تو لا علمی کی بدولت ارکانِ اسمبلی سوال کرنے سے قاصر تھے اور دوسری طرف اس کام کے اہل افراد کی وہاں تک رسائی خارج از امکان تھی۔ اس صورتِ حال سے عہدہ برآ ہونے کے لیے بعض ممبران نے ایسے علماء اور لیکچراروں سے رابطہ کیا جن کی پرجوش اور جذباتی خطابت سے وہ متأثر تھے، لیکن جلد ہی انہیں معلوم ہو گیا کہ یہ حضرات اس کام کے اہل نہیں۔ کوئی صاحبِ قلم نہیں تو کسی کے پاس متعلقہ لٹریچرنہیں۔
حافظ محمد ابراہیم کمیر پوریa فرماتے ہیں کہ
’’میں ان دنوں سرگودھا میں مقیم تھا اور علالت کے باعث زیادہ تگ و دو نہیں کر رہا تھا۔ لیکن انہی دنوں رکن قومی اسمبلی خواجہ محمد سلیمان تونسوی نے خواجہ قمر الدین سیالوی سے عرض کی کہ وہ ہماری راہنمائی کے لیے کسی ایسے صاحبِ علم کا انتظام کریں جو اِن اِن اوصاف کا حامل ہو۔ حضرت خواجہ سیالوی صاحب نے مجھے اس کام کا اہل سمجھا اور میں ان کے ارشاد کے مطابق خواجہ صاحب تونسوی کے پاس اسلام آباد پہنچ گیا اور قادیانیوں کے خلاف قرار داد منظور ہونے تک وہیں رہا۔‘‘
پیر آف سیال کے ارشاد پر جب اسلام آباد جانے کا پروگرام طے پایا تو اسلام آباد میں قیام کے مصارف کا مسئلہ سامنے آیا۔ سرگودھا میں تحفظ ختم نبوت کی تنظیم سے کچھ لینا میری جماعت کو پسند نہ تھا اور مقامی جماعت سے اخراجات وصول کرنا مجھے گوارا نہ تھا۔ آخر اس مشکل کو محترم الحاج میاں عبدالستار صاحب آزادؔ نے حل کر دیا۔ انہوں نے یہ بوجھ اپنے ذمے لے لیا اور اسے پوری طرح نبھایا۔ وعند اﷲ في ذاک الجزاء !
راولپنڈی پہنچ کر میں نے سب سے پہلے مختلف ذرائع سے یہ معلوم کیا کہ مجھے جو کچھ کرنا ہے اس کے حدود کیا ہیں اور اس کا طریق کار کیا ہے۔ مجھے معلوم ہوا کہ مفتی محمود، شاہ احمد نورانی، مولانا عبدالحکیم، پروفیسر عبدالغفور اور کچھ دوسرے حضرات نے بھی اس مقصد کے لیے کچھ علماء کی خدمات حاصل کی ہیں۔ میں ان سب سے ملا لیکن شرح صدر نہ ہوا۔ آخر براہِ راست سکریننگ کمیٹی کے چیئرمین سے ملاقات کی۔ وہ راسخ العقیدہ مسلمان، جدید تعلیم یافتہ اور قانون مروجہ کے طالب علم تھے۔ ان کی راہنمائی سے مجھے بڑا اعتماد حاصل ہوا۔ مزید برآں انہوں نے خود بھی مرزائی سیاسیات کے موضوع پر مجھ سے معلومات حاصل کیں۔
مرزا ناصر احمد نے اپنے بیان میں جن حقائق کو چھپایا تھا، وکیل استغاثہ کی طرح ہم ان کی زبان ہی سے وہ اگلوانا چاہتے تھے اور اراکین اسمبلی کو بتانا چاہتے تھے کہ انہوں نے اس معزز ایوان کو جو معلومات فراہم کی ہیں وہ غلط بیانی اور فریب دہی کے زمرے میں آتی ہیں۔ اٹارنی جنرل ممبرانِ اسمبلی کے حوالے سے جو سوال مرزا ناصر سے پوچھتے تھے، دراصل وہ ہمارے ہی تیار کردہ سوال تھے جو درمیانی کمیٹیوں سے پاس ہو کر وہاں تک پہنچتے تھے۔
بعد ازاں حافظ کمیر پوری رحمہ اللہ نے اپنی کتاب ’’فسانہ قادیان‘‘ (ص: ۶۴۔۷۰) میں وہ مدلل چھبیس سوالات درج کیے ہیں جو انہوں نے لکھے اور ممبر نیشنل اسمبلی خواجہ غلام سلیمان تونسوی نے ۲۵ جولائی ۱۹۷۴ء کو قومی اسمبلی میں پیش کیے تھے، علاوہ ازیں حافظ ابراہیم صاحب مرحوم نے مزید ۱۸ متفرق سوالات بھی اپنی کتاب میں درج کیے ہیں جو ان کے تیار کردہ تھے اور قومی اسمبلی میں زیر بحث لائے گئے۔ طوالت کے پیش نظر ہم یہ ساری تفصیلات تو درج نہیں کر سکتے، شائقین انہیں محولہ بالا کتاب میں ملاحظہ کریں، البتہ ہم وہ فیصلہ کن سوال اور اس کی روداد حافظ کمیر پوری ہی کے قلم سے پیش کرتے ہیں جس کے نتیجے میں مرزا ناصر کی مکاری اور دجل و فریب کھل کر سامنے آ گیا اور یوں قادیانی امت اپنے انجام کو پہنچی۔
حافظ کمیرپوری صاحب ’’لاجواب اور فیصلہ کن سوال‘‘ کے عنوان سے اپنی کتاب ’’فسانہ قادیان‘‘ میں لکھتے ہیں:
’’ارکانِ اسمبلی کی طرف سے آخری سوال جس کا جواب مرزا ناصر نہ دے سکا، وہ میرا ہی تحریر کردہ تھا۔ ان سے پوچھا گیا کہ آپ لوگ مرزا کی نبوت کو ظلی، بُروزی اور لغوی وغیرہ کہہ کر اس کی شدت اور سنگینی کو کم کرنا چاہتے ہیں، جب کہ وہ خود اپنے آپ کو آنحضرتe کے ہم پلہ بلکہ ان سے اونچی شان کا حامل قرار دیتے ہیں، جیسا کہ ان کا ایک مرید ان کی زندگی اور ان کی موجودگی میں ان کی مدح و توصیف ان الفاظ میں کرتا ہے:
محمد پھر اتر آئے ہیں ہم میں
اور آگے سے ہیں بڑھ کر اپنی شان میں
محمد دیکھنے ہوں جس نے اکمل
غلام احمد کو دیکھے قادیان میں
(اخبار البدر ۲۲ اکتوبر ۱۹۰۲ء)  
مرزا قادیانی نے اس گستاخ کو نہ ڈانٹا، نہ جھڑکا بلکہ ’’زبانِ مبارک‘‘ سے جزاک اللہ کہا اور فریم شدہ قصیدہ گھر لے گئے۔ مرزا ناصر نہ صرف اس سوال کا جواب نہ دے سکا بلکہ بھری محفل میں اپنی ایک غیر اخلاقی حرکت کی پاداش میں اٹارنی جنرل کی سرزنش کا نشانہ بن گیا۔
تفصیل اس اجمال کی یہ ہے کہ سکریننگ کمیٹی میں جو چند سوالات ہماری طرف سے پیش کیے گئے، ان میں یہ سوال اپنے صحیح حوالے کے ساتھ شامل تھا۔ یہ سوال کسی اور معزز رکن کی طرف سے بھی آیا تھا، لیکن انہوں نے حوالے میں قادیانیوں کے اخبار ’’بدر‘‘ کی جگہ ’’الفضل‘‘ کا نام لکھ دیا تھا۔ بعض مخفی ذرائع مرزا ناصر کو ہمارے فراہم کردہ ان سوالات سے رات کو آگاہ کر دیتے تھے اور قادیانی علماء کا بینچ انہیں جواب کے لیے تیار کرتا تھا۔ سکریننگ کمیٹی نے ہماری اجازت سے طے کیا کہ یہ سوال اس معزز ممبر کی طرف سے پیش ہو، اس کارروائی کا منشا یہ تھا کہ زیادہ سے زیادہ ارکان کو جرح کے عمل میں شریک کیا جائے۔
خلیفہ جی اس سوال کا جواب دینے کے لیے ’’الفضل‘‘ کا پہلا شمارہ ساتھ لائے۔ اٹارنی جنرل نے جب ’’الفضل‘‘ کے حوالے سے یہ سوال کیا تو خلیفہ جی نے اس کا پہلا شمارہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ ’’الفضل‘‘ تو شروع ہی ۱۹۱۴ء میں ہوا تھا، لہٰذا یہ سوال قطعی بے بنیاد ہے جو ’’الفضل‘‘ کا آغاز ۱۹۰۲ء سے پہلے بتا رہا ہے۔
اٹارنی جنرل نے سوال واپس لے لیا اور ارکانِ اسمبلی کو صحیح حوالہ پیش کرنے کی ہدایت دی۔ میرے احباب نے فوراً اس صورتِ حال سے مجھے مطلع کیا۔ میں نے متعلقہ کمیٹی کی وساطت سے قومی اسمبلی کے سیکرٹری اور اٹارنی جنرل تک اصل حوالہ ’’بدر۔ ۲۶ اکتوبر ۱۹۰۲ء‘‘ پہنچایا، پھر دوسرے دن خواجہ صاحب تونسوی کے حوالے سے دوباہ سوال کرنے کی درخواست کی، جو منظور ہوئی۔
اگلے دن کارروائی کے آغاز ہی میں کمال عقل مندی سے کام لیتے ہوئے اٹارنی جنرل نے خلیفہ جی سے کہا کہ مرزا صاحب! وہ کل والی بات پوری طرح صاف نہیں ہوئی۔ مرزا ناصر نے پوری عیاری سے کام لیتے ہوئے پر اعتماد انداز میں کہا: جناب میں بتا چکا ہوں کہ ۱۹۰۲ء میں ’’الفضل‘‘ تھا ہی نہیں۔ اٹارنی جنرل نے کہا: ہو سکتا ہے کہ کسی اور اخبار، رسالے یا کتاب میں یہ عبارت ہو اور فاضل ممبر کو حوالہ لکھنے میں غلطی لگ گئی ہو۔ آپ اپنے پورے لٹریچر سے اس شعر کی نفی کریں۔ مرزا ناصر نے ایسے ہی کیا اور واشگاف الفاظ میں کہا کہ جناب یہ ہم پر کھلم کھلا اتہام ہے۔ میں اپنے مکمل لٹریچر میں اس کی نفی کا اظہار کرتا ہوں۔ اس پر اٹارنی جنرل نے ہمارا پیش کردہ ۲۲ اکتوبر ۱۹۰۲ء کا ’’بدر‘‘ نکالا اور بلند آواز سے یہ شعر پڑھتے ہوئے قومی اسمبلی کو ورطۂ حیرت اور خلیفہ ربوہ کو بحرِ ندامت میں ڈال دیا، پھر خلیفہ کو مخاطب کرتے ہوئے فرمایا: ’’مرزا صاحب! یہ بات قطعاً قرین قیاس نہیں کہ یہ حوالہ آپ اور آپ کے معاونین کو معلوم نہ ہو۔ بڑے افسوس کی بات ہے کہ آپ نے ایک مذہبی راہنما ہوتے ہوئے اس معزز ہاؤس میں حقائق پر پردہ ڈالنے کی ناروا جسارت کی ہے۔‘‘
خلیفہ جی جو سات دن سے عدالت کے کٹہرے میں کھڑے ہو کر اپنی نوعیت میں اس مثالی جرح سے مجروح ہو چکا تھا، آج کی کارروائی سے اتنا بد دل ہوا کہ اس نے مزید سوالات کا جواب دینے سے معذوری ظاہر کر دی۔ یوں ان کی اسی پسپائی اور رسوائی پر معاملہ اپنے منطقی انجام کو پہنچا۔ فللّہ الحمد!
اس طویل اور صبر آزما جدوجہد کے بعد ۷ ستمبر ۱۹۷۴ء کو حکومتی ایوان میں مرزائیوں کی دونوں جماعتوں قادیانی اور لاہوری گروہ کو غیر مسلم قرار دیتے ہوئے یہ قرارداد پاس کی گئی:
’’جو شخص محمدe کی نبوت مطلقہ پر ایمان نہ رکھے اور آپ کو آخری پیغمبر تسلیم نہ کرے۔ یا جو شخص کسی بھی معنی، کسی بھی شکل اور لفظِ نبوت کی کسی بھی تعبیر کے مطابق نبوت کا مدعی ہو۔ اسی طرح جو شخص کسی بھی ایسے مدعی نبوت پر ایمان لائے یا اسے مجددِ دین سمجھے وہ دستور و قانون کی نگاہ میں غیر مسلم ہے۔‘‘
ہر چند کہ ختمی مرتبت علیہ الصلاۃ والسلام کے بعد نبوت کے منصب پر براجمان ہونے والے اور اس کے متبعین کی اصل سزا تو وہی ہے جو صدیق اکبر کی خلافت میں مسیلمہ کذاب اور ان کی قوم کو دی گئی تھی، لیکن ہمارے لیے یہ بات بھی غنیمت ہے کہ بین الاقوامی سطح کے سیکولر اور مذہب گریز عالمی اداروں کے طے کردہ نام نہاد بنیادی حقوق کے شور شرابے کے دور میں پاکستان کی قومی اسمبلی نے نہ صرف مرزا غلام احمد قادیانی پر حضرت نذیر حسین محدث دہلوی علیہ الرحمۃ کے فتوائے تکفیر کو صحیح باور کیا، بلکہ امتِ مسلمہ کی وحدت کو سبوتاژ کرنے والی مرزائی جماعت کو غیر مسلم اقلیت قرار دینے والے علامہ اقبالa کے مطالبہ کو بھی عملی جامہ پہنا دیا۔ فللّہ الحمد‘‘ (فسانہ قادیان، ص: ۶۲۔۷۵)
سطورِ بالا میں اختصار کے ساتھ ہم نے صرف ۷۴ء کی تحریک ختم نبوت میں حافظ کمیرپوریa کی خدمات کا اجمالی تذکرہ ہے، ضرورت تو یہ بھی ہے کہ قادیانی فتنے کی سرکوبی کے علاوہ ان کی دیگر علمی، سیاسی، دعوتی، تعلیمی اور ملی خدمات کا ذکر بھی کیا جائے، لیکن سر دست ہم اسی پہ اکتفا کرتے ہیں اور یہ کام کسی دوسری فرصت کے لیے اٹھا رکھتے ہیں۔
اللہ تعالی مرحوم حافظ صاحب اور اس کار عظیم کی ادائی میں شریک دیگر مذہبی و سیاسی قائدین کو اجر جزیل سے نوازے اور روز قیامت اسے شفاعت نبوی کا ذریعہ بنائے۔ آمین یا رب العالمین!


No comments:

Post a Comment