یورپ میں اسلامی علوم وفنون کی تاریخ 42-2019 - ھفت روزہ اھل حدیث

Breaking

Saturday, November 09, 2019

یورپ میں اسلامی علوم وفنون کی تاریخ 42-2019


یورپ میں اسلامی علوم وفنون کی تاریخ

تحریر: جناب قاضی مبارکپوری
جب مشرق میں بنو امیہ کی حکومت و خلافت پر زوال آیا تو مغرب کی سر زمین نے اس خاندان کے لیے اپنی آغوش کھولی۔ چنانچہ عباسی خلفاء کے مظالم سے بھاگ کر عبد الرحمٰن داخل نے اندلس کے شہر قرطبہ میں جا کر ۱۳۸ھ میں ایک تازہ دم اموی حکومت کی بنیاد رکھی۔ مغرب کی اموی خلافت نے ۲۸۴ سال تک عبد الرحمن کی نسل سے ۱۹  خلفاء کو یکے بعد دیگرے تخت نشیں بنایا۔ پھر اس کے بعد اس میں طوائف الملوکی پھیل گئی اور مختلف خاندانوں نے اندلس کے مختلف مقامات پر اپنی اپنی حکومت و ریاست قائم کی۔
 اندلس میں اسلامی علوم کی تجلّی:
خلفائے اموی نے مغرب میں اپنی اس سیاست کو نہیں چلایا جو مشرق میں ان کے لیے طرۂ امتیاز تھی، جس کی بدولت خلفائے بنو امیہ نے دین اسلام، عربی تہذیب و تمدن اور عربی زبان و ادب کو اغیار کے اثرات سے ہر طرح محفوظ رکھا تھا، بلکہ مغر ب میں انہوں نے مغربی قوموں سے میل جیل پیدا کرکے ان کے ساتھ علمی اور دینی رابطہ پیدا کیا، جس طرح کہ مشرق میں بنو عباس نے عجمی عناصر سے تعلقات وسیع کر کے ان سے ربط پیدا کیا۔
مگر اس میں مغرب کے اموی خلفاء مشرق کے عباسی خلفاء سے زیادہ کامیاب سیاست کے مالک رہے، یعنی اندلس میں خلفائے بنو امیہ نے دوسری مغربی قوموں کو اپنے ثقافتی، تہذیبی، دینی اور لسانی اثرات سے متاثر کر کے ان سے میل جول پیدا کیا، اور بغداد میں خلفائے بنو عباسیہ غیر قوموں پر اپنا اثر ڈالنے کے بجائے خود ہی ان کے اجنبی اثرات و خیالات سے متاثر ہوئے اور دوسروں نے آکر ان کی سیاست، ثقافت، خیالات اور زبان و ادب پر قبضہ جمایا۔ مغرب میں یہ صورت نہ تھی، بلکہ وہاں پر مغربی قوموں نے مسلمانوں سے تعلق پیدا کر کے آس طرح اسلامی زبان و ادب اور دینی خیالات کو اپنایا کہ مسیحی پادریوں کو مجبوراً اپنی مذہبی کتابوں کو قدیم زبانوں سے عربی زبان میں منتقل کرنا پڑا۔
اندلس میں خلیفہ عبد الرحمن ثانی (۲۰۶ھ تا ۲۳۸ھ) سے لے کر خلیفہ عبد الرحمٰن ثالث (۳۰۰ھ تا ۳۵۰ھ) اور اس کے بیٹے حَکَم تک کا زمانہ نہایت زریں زمانہ گذرا ہے اس دور میں مغرب میں اسلامی علوم و فنون نے خوب ترقی کی۔ اسلامی افکار و خیالات کو خوب عروج ہوا اور اسلامی ثقافت و تہذیب نے مغربی قوموں کو اپنے اندر خوب جذب کیا۔
 یورپ میں جہالت کا خطرناک دور
اس زمانہ میں اندلس سے متصل مغربی ممالک کی قومیں جہالت کے اندھیروں میں گرفتار تھیں، عوام کے دل و دماغ پر کلیسائی جہالت سوار تھی، اور مسیحی پادری علوم و فنون کی ہر روشنی کو بجھا کر اپنے اور مسیحی حکمرانوں کے لیے عوامی ذہن و فکر پر تخت بچھا رکھے تھے۔ آخر یورپ کو علم کی روشنی اندلس کی اسلامی درسگاہ ہی سے ملی اور مغربی قوموں نے نہایت سرعت کے ساتھ تحصیل علم میں کوشش کی اور اس معاملہ میں بعض مسیحی پیشواؤں نے سبقت کی۔ چنانچہ ۱۱۳۰ء میں اندلس کے شہر طلیطلہ میں ایک مدرسہ جاری کیا گیا جس میں عربی زبان کے علوم کو لاطینی زبان میں ترجمہ کرنے کا شعبہ قائم کیا گیا۔ اس مدرسہ کا نگران ریموند نامی ایک پادری تھا، اندلس کے یہودیوں نے اس علمی اکیڈمی میں خوب حصہ لیا اور عربی زبان کی بڑی بڑی کتابوں کو لاطینی زبان میں منتقل کرنے کا کام نہایت تیزی سے ہوا۔ ان تراجم نے مغربی قوموں میں علم و فن کی روشنی بخشنا شروع کی، جس کی وجہ سے اہلِ مغرب میں علمی دلچسپی نئے رنگ میں نئی امنگ کے ساتھ ابھرنے لگی۔ عربی کتابوں کے تراجم کا بہت بڑا ذخیرہ مغرب کے پاس آ گیا۔ ڈاکٹر کلارک نے شمار کر کے بتایا ہے کہ چودہویں صدی تک عربی زبان کی ۳۴۰ بڑی بڑی کتابوں کا لاطینی زبان میں ترجمہ کیا گیا۔
 یورپ کے عقلیاتی دور کی ابتدا
ان اداروں میں جن کتابوں کا ترجمہ کیا گیا ان کا زیادہ تر حصہ فلسفہ‘ طبعی اور عقلی علوم سے تھا اور اس وقت خاص طور سے زکریا رازی، ابو القاسم زہراوی، ابن رشد اور بو علی ابن سینا جیسے اسلامی فلسفہ اور علوم عقلیہ کے ماہرین کی کتابیں مغربی زبانوں میں ترجمہ کی گئیں۔ نیز اہلِ یورپ نے عربوں کے واسطہ سے اسی زمانہ میں جالینوس، بقراط، افلاطون، ارسطو اور اقلیدس کی کتابوں کو جو یونانی زبان سے عربی میں منتقل ہو چکی تھیں ان کا ترجمہ بھی لاطینی زبان میں کیا۔
یہی کتابیں یورپ میں علمی شعور کے ساتھ ساتھ مقبول ہوئیں اور پڑھی گئیں، بلکہ بارہویں صدی سے لے کر ان مذکورہ بالا کتابوں میں سے اکثر و بیشتر کتابیں، پانچ چھ صدیوں تک یورپ کی یونیورسٹیوں میں عقلی و طبعی علوم و فنون کے لیے نصاب بنی رہیں۔ ان میں سے بعض بعض کتابیں تو انیسویں صدی تک یورپ کی یونیورسٹیوں میں داخلِ درس رہیں اور اہل مغرب ان سے استفادہ کرتے رہے۔
اس طرح اہل مغرب نے اندلس کے اسلامی علوم و فنون کی شمع سے روشنی حاصل کرکے اپنے کلیسائی دورِ جہالت سے نجات حاصل کی اور مسلمانوں کے توسط سے قدیم یونانیوں کی کتابیں اور خود مسلمان عقلاء و فلاسفہ کی کتابیں حاصل کیں اور ان کو پڑھا پڑھایا۔ اس علمی نہضت کے نتیجہ میں آج یورپ ایجاد و فلسفہ اور فکر و سائنس میں اس قدر آگے بڑھ گیا ہے کہ اگر اسے اندلس سے روشنی نہ ملی ہوتی تو یقیناً آج بھی یورپ جہالت اور لا علمی کی دلدل میں پھنسا ہوا ہوتا۔
ایک انگریزی مؤرخ مسٹر ملر اپنی کتاب ’’فلسفہ تاریخ‘‘ میں لکھتا ہے کہ
’’مغربی علوم کے اصل مآخذ عربوں کے وہ مدارس ہیں جو ہسپانیہ میں قائم تھے اور یورپ کے ہر ہر ملک کے طلبہ ان مدرسوں کی طرف دوڑتے تھے اور ان میں علوم ریاضیہ اور علوم ما وراء الطبیعہ حاصل کرتے تھے، اسی طرح جب عربوں نے جنوبی اٹلی پر قبضہ کیا تو وہ بھی یورپ میں اسلامی علوم کے داخلہ کا واسطہ بنا۔‘‘
 اسلامی علوم سے یورپ کی دل چسپی
ہسپانیہ کی درسگاہ سے جو پہلا مغربی عالم نکلا وہ ایک فرانسیسی پادری بریزت نامی ہے، اس نے اپنے لاہوتی علوم کی تکمیل کرکے فرانس سے اشبیلیہ کی راہ لی اور وہاں پر تحصیل علم کیا۔ پھر قرطبہ میں جاکر ریاضی اور فلکیات وغیرہ کا علم تین سال تک حاصل کیا۔ پھر فرانس آ کر ان علوم عربیہ سے عوام کو روشناس کرایا جس پر اسے جادوگر اور کافر کا خطاب دیا گیا، مگر ۹۵۵ء میں اس نے اپنی ترقی کی راہ لی اور نادانوں سے اسے نجات ملی۔ اسی طرح قرطبہ کی درسگاہ سے شانجہ نامی ایک مغربی حکمران نے بھی علم کی تکمیل کی، اسی زمانہ میں اٹلی کے بعض لکھے پڑھے لوگوں نے عربی زبان کو سیکھا اور اسے دنیا کی بہترین ادبی زبان سمجھ کر اس میں مہارت حاصل کی، نیز اسی دور میں ایک مسیحی راہب نے مسیحی قوم کو عربی زبان حاصل کرنے کی ترغیب دیتے ہوئے بتایا کہ
’’اللہ حکمت کو جسے چاہتا ہے دیتا ہے، اس نے لاطینی زبان کو حکمت نہیں دینا چاہا بلکہ یہود اور عرب وغیرہ کو دیا، اس لیے تم لوگ عربی زبان حاصل کرکے حکمت کو حاصل کرو۔‘‘
اس طرح مغربی قوموں میں علمی شعور کی جڑ بنیاد پیدا ہوئی اور ترقی پسند پادریوں اور مذہبی طبقوں نے عربی زبان اور اسلامی علوم سے دلچسپی لینا شروع کی۔ یورپ کے جس ملک میں یہ ذہن پیدا ہوا، وہاں کے لکھے پڑھے لوگوں نے اندلس کی اسلامی درسگاہوں کا رخ کیا اور واپس آ کر اپنے ملک میں علم و حکمت کی بساط بچھائی۔
 یورپ کے علمی شعور میں سیاسی شعور کی آمیزش
آہستہ آہستہ یورپ میں علمی شعور پیدا ہوتا گیا اور وہاں کے علمی دائرہ میں وطنیت اور قومیت کا عمل دخل بھی ہونے لگا۔
اس قومی اور وطنی احساس نے یورپ کی علمی سرگرمی میں دوسرا رنگ پیدا کر دیا، چنانچہ اہل مغرب نے آگے چل کر عربی علوم و فنون کے علاوہ مشرق کے دوسرے معاملات میں دلچسپی لینا شروع کی اور ان کی توجہ تجارت، استعماریت اور دینی تبلیغ کی طرف بھی ہوگئی۔ اس کا نتیجہ یہ ہوا کہ یورپ کی قومیت نے ان نظریات کو سامنے رکھ کر مشرق کے ساتھ ربط پیدا کرنا شروع کیا، مشرقی دنیا کے حالات کا پتہ چلایا، یہاں کے ملکی اور جغرافیائی حالات دریافت کیے، یہاں کے دینی‘ تہذیبی اور تمدنی و معاشرتی رجحانات معلوم کیے اور مشرقیت کے مخفی خزانوں کی دریافت کے لیے عام مشرقی علوم و فنون حاصل کیے، اپنے یہاں مشرقی ادب کو زندہ کیا، یہاں کی کتابوں کو چھاپا، ان کے ترجمے کیے اور عربی زبان کے علاوہ فارسی، ہندی، سنسکرت، اردو وغیرہ زبانوں کو حاصل کیا، ان کی کتابوں کو پڑھا اور ان زبانوں میں خود بھی کتابیں لکھیں۔
اس طرح یورپ کے ’’مستشرقین‘‘ نے ’’استشراق‘‘ کو ایک فن کی حیثیت دے دی، جس کی رو سے وہ مشرق کی زندہ اور مردہ زبانوں کو حاصل کرنے لگے اور اس کے ادب و اسلوب کو پوری طرح معلوم کرنے لگے۔
اسلامی علوم کے لیے پریس اکیڈمی اور دوسرے تصنیفی مشاغل
اس مقصد کے لیے اہل،غرب نے پریس اور مطابع جاری کیے اور عربی زبان کی کتابیں شائع کرنا شروع کیں، چنانچہ یورپ والوں نے اپنے یہاں سب سے پہلے عربی کتابوں ’’المجموع المبارک‘‘ اور ابن العمید سکین کی تاریخ، ابن عربی کی کتاب تاریخ الاول، سعید بن بطریق کی نظم الجواہر، پھر تاریخ ابو الفداء اور مقاماتِ حریری کو چھاپ کر ان کو شائع کیا۔
اہلِ یورپ نے مشرقی علوم و فنون کی فراہمی کے لیے خاص خاص کتب خانے قائم کیے اور کتابیں یکجا کیں، انیسویں صدی عیسوی کی ابتداء میں یورپ کے مختلف کتب خانوں میں عربی زبان کی ڈھائی لاکھ سے زیادہ کتابیں موجود تھیں جو لینن گراڈ، پیرس، برلین، لندن، آکسفورڈ، روم، اسکوریال وغیرہ کے کتب خانوں میں رکھی ہوئی تھیں۔ اسی طرح عربیت کے لیے اہل مغرب نے بہت سی علمی اکادمی کی بنیاد ڈالی اور علمی مجلسیں قائم کیں، جن میں عربی کتابوں کی نشر و اشاعت کا کام ہوتا تھا، سب سے قدیم انجمن ۱۷۸۱ء میں جاوا کے دارا لحکومت میں قائم کی گئی، پھر کلکتہ میں سر ولیم جونس نے ۱۷۸۴ء میں عربی کی اشاعت کے لیے ایشیاٹک سوسائٹی قائم کی، اور ۱۷۸۸ء سے ۱۸۳۶ء تک بیس جلدوں میں اس سلسلہ کی کتابیں شائع ہوئیں، نیز کلکتہ کی اس سوسائٹی کی طرف سے ایک رسالہ بھی ۱۸۳۳ء میں شائع ہونا شروع ہوا تھا، جو لگاتار شائع ہوتا تھا۔
اس زمانہ میں لندن میں شاہ انگلستان کی سرپرستی میں مشرقیات کے پڑھنے کے لیے ایک سوسائٹی قائم کی گئی، انگلستان کے بڑے بڑے فضلاء اس کے ممبر تھے۔
۱۸۲۰ء میں فرانسیسی مستشرقین نے فرانس میں عربی کتابوں کی طباعت و اشاعت کے لیے ایک سوسائٹی قائم کی اور انہوں نے اس سوسائٹی کی طرف سے ایک رسالہ بھی جاری کیا جس میں عربی اور عربیت کے بارے میں قیمتی معلومات ہوتی تھیں۔
اسی طرح امریکہ، روس، اٹلی، بلجیم، ہالینڈ، ڈنمارک وغیرہ کے مستشرقین نے انگریزوں اور فرانسیسیوں کے نقشِ قدم پر چل کر عربی علوم و فنون کے لیے اکیڈمی اور سوسائٹی قائم کی، کتابیں شائع کیں اور رسالے جاری کیے، مشرقی علوم و فنون کے سلسلے میں یورپ کے مستشرقین نے بڑی بڑی کانفرنسیں بھی کیں، بلکہ آج تک مستشرقین یورپ کی بین الاقوامی کانفرنسیں دنیا کے مختلف ممالک میں ہوتی رہتی ہیں، خاص طور سے مستشرقین نے یورپ کے مختلف ممالک میں عربیت کے لیے انیس کانفرنسیں قائم کیں۔
پہلی کانفرنس ۱۸۷۲ء میں پیرس میں منعقد ہوئی، ۱۹۰۸ء میں بھی پیرس میں یہ کانفرنس ہوئی، اس قسم کی کانفرنسوں میں اہلِ مغرب مشرقیات کے مختلف پہلوؤں پر علمی اور تحقیقی مقالات پیش کرتے ہیں اور بڑی تلاش و جستجو سے ایک ایک موضوع پر بیش بہا اور قیمتی معلومات جمع کرتے ہیں۔
اہل یورپ نے عربی علوم کی نشر و اشاعت کے لیے عربی کے مجلات و جرائد جاری کیے، دنیا بھر سے مخطوطات اور قلمی کتابوں کے ذخیرے جمع کیے، نادر و نایاب اور عمدہ سے عمدہ کتابوں کو بہترین حواشی تحقیق اور نوٹ  کے ساتھ شائع کیا، ان کی فہرستوں میں جا بجا اضافہ کیا، اور مختلف ناموں، موضوعوں اور مقامات کی الگ الگ فہرست مرتب کرکے لگائی، الفاظ کی تحقیقات اور اصول لغت کی تنقیحات میں کمال دکھایا۔
واقعہ یہ ہے کہ کتابوں کی تصحیح اور ان کو پورے اہتمام کے ساتھ شائع کرنے میں اہلِ مغرب اپنی نظیر نہیں رکھتے اور یہ ان کا امتیازی کارنامہ ہے۔
 موجودہ حالات پر ایک نظر:
اس طرح اہل یورپ نے اسلامی علوم اور عربی زبان کو حاصل کر کے اپنی زندگی میں ایک ایسا عظیم انقلاب برپا کیا جس نے ایک طرف ان کو علم و تحقیق، سائنس و ایجاد اور فلسفہ کے اختراع میں مشہور کیا اور دوسری طرف ان کو مغرب سے اٹھا کر مشرقی ممالک کی حکومت کے تخت پر بٹھایا۔
اہل یورپ نے اگرچہ اسلامی علوم و فنون کی وجہ سے قومیت و وطنیت کی راہ پائی اور مغرب سے چل کر مشرق کی حکمرانی کی، مگر اس حال میں بھی انہوں نے اسلامی علوم  و فنون کا ذوق ختم نہیں کیا بلکہ آج بھی یورپ اور امریکہ میں اسلامیات پر بہت کچھ کام ہو رہا ہے اور ان ممالک کے علماء وفضلاء، عربی زبان اور عربی علوم کی نشر و اشاعت میں لگے رہتے ہیں اور اسلامی کتابوں کی اشاعت میں اسی نشاط سے کام کرتے ہیں۔
اسپین میں جنرل فرانکو کی سرپرستی میں عربی کتابوں کی اشاعت کی طباعت کام جاری ہے، امریکہ میں عربی کتابوں کی تعلیم اور اشاعت کا کام جاری ہے، اسی طرح یورپ کی بڑی بڑی یونیورسٹیوں میں اسلامیات کے شعبے قائم ہیں اور اسلامی علوم و فنون پر اہلِ مغرب اپنے ذوق کے مطابق کام کر رہے ہیں۔
 حرفی پریس کی مختصر تاریخ:
اس سلسلہ میں پریس اور مطبع کی تاریخ ایک دلچسپ کہانی معلوم ہوگی‘ مختصر طور پر اس کا حال ملاحظہ ہو:
’’ٹائپ کے ذریعہ طباعت کی ایجاد ایک جرمن نے ۱۴۴۰ء میں کی، اس کو عربی زبان میں ’’حنا جو نمبر ج‘‘ کہتے ہیں۔ طباعت کی ایجاد نے علوم اور فنون کی ترقی میں کافی مدد کی اور ایک مدت تک یورپ میں اس کا دائرہ عمل وسیع ہوتا رہا،۔ عربی زبان کی سب سے پہلی کتاب ۱۵۱۴ء میں چھاپی گئی، اس کے بعد مشرقی ممالک میں پریس ترقی کرتا گیا، خصوصیت سے عربی زبان کی کتابیں دن بدن زیادہ چھپنے لگیں، مگر ابتدا میں ان کی طباعت بھی یورپ ہی کے ممالک میں ہوتی رہی، چنانچہ ان ہی زمانوں میں نزہۃ المشتاق ادریسی، قانون بو علی بن سینا، تحریر اصول اقلیدس وغیرہ یورپ سے شائع ہوئیں بلکہ اب تک یورپ سے نادر و نایاب کتابیں شایع ہوتی رہتی ہیں۔ اس کے بعد مشرقی دنیا میں طباعت کا فن سلطنت ترکیہ کی راہ سے ۱۴۹۰ء میں داخل ہوا، اور آستانہ میں ایک یہودی عالم نے ۱۴۹۰ء میں پریس قائم کر کے کئی علمی اور مذہبی کتابیں چھاپیں، مگر اب تک چھپائی کا کام رومن رسم الخط میں ہوتا رہا، پھر ۱۷۲۸ء میں عربی حروف کی ابتدا ہوئی، اور ان کا پریس قائم ہوا، اس دور میں عربی حروف کا سب سے مشہور پریس آستانہ کے پریسوں میں مطبعۃ جوائب تھا، جو احمد فارس شدیاق مرحوم کی ملکیت میں تھا۔ اس مطبع میں مختلف علوم و فنون اور ادب کی امہات الکتب چھاپی گئیں، یہ مطبع ترکی کا مشہور ترین مطبع تھا۔‘‘
عرب ممالک میں حروف کی چھپائی کی ابتداء لبنان سے ہوئی اور مسیحی پادریوں اور مبشروں نے اس میں سبقت کی، چنانچہ لبنانی مسیحی پادریوں نے سترہویں صدی عیسوی کے شروع میں سب سے پہلا پریس قائم کیا۔ اس کے بعد ان ہی کی طرف سے ۱۸۴۰ء میں ’’مطبعۃ کاثولیکہ‘‘ قائم ہوا، اس پریس نے عربی زبان کی قدیم اور نادر کتابوں کو شائع کیا، اور علم و ادب کی بہت خدمت کی۔ اس کے بعد ہی مصر میں مطبع کا قیام ہوا اور ۱۷۹۸ء میں نائبیون کے ہاتھوں چھپائی کا کام جاری ہوا، اس نے سرکاری فرمانین اور احکام کو عربی زبان میں چھاپنے کے لیے ’’مطبعہ اہلیہ‘‘ کے نام سے پریس جاری کیا، مگر اس کے ساتھ ساتھ یہ پریس بھی چلتا رہا اور محمد علی پاشا نے مطبعہ اہلیہ کی جگہ ۱۸۳۰ء میں ’’مطبعۃ بولاق‘‘ جاری کیا اور اس کی ادارت کا کام شام کے ایک ماہر ’’نقولا سایکی سوری‘‘ کے سپرد کیا۔ مطبعہ بولاق کے لیے خاص طور سے مختلف سائز کے بہترین طریقے پر حروف ڈھالے گئے، پھر دوسری مرتبہ عربی حروف کی ڈھلائی مصر کے سب سے بڑے خوشنویس مرحوم جعفر بیگ کے قاعدہ کے مطابق ہوئی، مصر میں آج تک مرحوم جعفر بیگ کے اصول پر ڈھالے ہوئے حروف کا استعمال ہوتا ہے۔
’’مطبعہ بولاق‘‘ نے ریاضیات، طب و جراحت اور غیر زبانوں سے ترجمہ شدہ تقریباً تین سو کتابوں کو چھاپا اور اس کے شعبہ ’’القسم الادبی‘‘ سے ادب کی امہات کتب چھاپی گئیں، اب بہت دنوں سے ’’مطبعہ بولاق‘‘ سرکاری چیزوں کو چھاپتا ہے اور درسی کتابیں اور سرکاری کاغذات اس میں چھپتے ہیں۔ ’’مطبعہ بولاق‘‘ کے بعد مصر میں بہت سے چھاپہ خانے قائم ہوئے جو ایک دوسرے سے بڑھ چڑھ کر کام کرتے ہیں۔
ہندوستان میں سب سے پہلے پرتگیزیوں نے جنوبی ہند میں ٹائپ پریس جاری کیا اور تامل اور ملیالم زبان میں مذہبی کتابیں چھاپیں۔ کلکتہ میں ۱۷۸۱ء میں ٹائپ پریس قائم ہوا، جس میں بہت سی عربی کتابیں چھاپی گئیں، بمبئی میں ۱۳۰ھ مطابق ۱۸۸۲ء میں ایک ٹائپ پریس تھا جس میں علامہ ادیب عبد الجلیل بن یاسین بصری متوفی ۱۲۷۰ھ کا دیوان ۲۸۰ صفحات پر چھاپا گیا، اس کے بعد بمبئی میں کئی حرفی پریس جاری ہوئے، مگر وہ بہت معمولی قسم کے تھے، اور زیادہ دنوں تک نہ چل سکے۔ آج کل بعض پریس اچھا کام کر رہے ہیں، ریاست حیدر آباد میں دائرۃ المعارف نے ایک پریس جاری کیا جس میں بہت سی نادر و نایاب کتابیں چھاپی گئیں۔
اسی طرح کراچی میں بھی مطبع قائم ہوا جس پر مختلف کتابیں چھپتی رہیں پھر مانگ کے مطابق ان میں اضافہ ہوا۔ تقسیم کے بعد جیسے زمانہ ترقی کرتا گیا مطابع میں بھی جدت پیدا ہوئی‘ پاکستان کے مختلف بڑے شہروں میں مطابع کام کرنے لگے۔ طباعت کا کام جدید ٹیکنالوجی کے باعث دن بدن ترقی کر رہا ہے۔ جو کام گھنٹوں میں ہوتا تھا اب وہ اچھے معیار کے ساتھ منٹوں میں ہو رہا ہے۔


No comments:

Post a Comment