اجلاس کابینہ وعاملہ مرکزی جمعیت اہل حدیث پنجاب 20-19 - ھفت روزہ اھل حدیث

تازہ ترین

Monday, September 21, 2020

اجلاس کابینہ وعاملہ مرکزی جمعیت اہل حدیث پنجاب 20-19

ھفت روزہ اھل حدیث، اجلاس کابینہ، مرکزی جمعیت اھل حدیث پنجاب، کابینہ وعاملہ، اجلاس عاملہ، اجلاس کابینہ وعاملہ، کابینہ وعاملہ پنجاب


اجلاس کابینہ وعاملہ مرکزی جمعیت اہل حدیث پنجاب

رپورٹ: جناب مولانا طارق جاوید (ناظم دفتر جمعیۃ اساتذہ پاکستان)

مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان ملک کی ایک مربوط اور منظم جماعت ہے جس کے بنیادی یونٹ مسجد سے لے کر مرکز تک باقاعدگی سے انتخابات ہر پانچ سال بعد ہوتے ہیں۔ اس سال ۸ مارچ ۲۰۲۰ء کو مرکزی انتخابات کے بعد صوبائی ذمہ داران کی نامزدگی‘ امیر محترم پروفیسر ساجد میرd نے فرمائی جس کے مطابق پنجاب کے امیر کے عہدے کے لیے مولانا عبدالرشید حجازیd کو نامزد کیا‘ اسی طرح حافظ محمد یونس آزاد کو ناظم اعلیٰ نامزد کیا۔ نئی قیادت نے اپنی کابینہ وعاملہ کا پہلا اجلاس بلایا۔

یہ پڑھیں:

۱۳ ستمبر ۲۰۲۰ء بروز اتوار دن ۱۱ بجے اجلاس شروع ہوا۔ امیر پنجاب وناظم اعلیٰ پنجاب سٹیج پر رونق افروز ہوئے۔ سینئر نائب امیر پنجاب حافظ ظفر اللہ خاں بھی سٹیج پر تشریف لائے۔ ناظم صاحب نے اجلاس کا باقاعدہ آغاز تلاوت قرآن مجید سے کرایا۔ تلاوت حافظ انیق الرحمن نے کی۔ بعد ازاں ناظم پنجاب نے اجلاس میں تشریف آوری پر تمام احباب کا شکریہ ادا کیا اور انہیں اہلا وسہلا ومرحبا کہا۔ اس کے بعد تعارفی نشست شروع ہوئی۔ سب نے اپنا نام‘ عہدہ‘ تحصیل وضلع کے بارے میں بتایا۔

سرپرست پنجاب سید سبطین شاہ نقوی بھی تشریف لے آئے۔ تعارفی نشست کے بعد امیر پنجاب مولانا عبدالرشید حجازی نے اجلاس کا تاخیر سے بلایا جانا‘ کورونا وائرس کی وجہ بتایا۔ انہوں نے تمام شرکاء کا شکریہ ادا کیا۔ اسی دوران امیر محترم پروفیسر ساجد میرd‘ نائب امیر حافظ عبدالحمید عامرd اور ناظم اعلیٰ ڈاکٹر حافظ عبدالکریمd بھی تشریف لائے اور جلوہ افروز ہوئے۔ کچھ ہی دیر بعد نائب امیر اور پیغام ٹی وی کے ڈائریکٹر قاری صہیب احمد میر محمدی بھی سٹیج پر رونق افروز ہوئے۔

امیر پنجاب نے تبلیغی وتنظیمی امور پر مشاورت اور آئندہ کے لائحہ عمل پر بحث کے لیے احباب کو دعوت دی۔ جس پر قاری حمزہ طور‘ ڈاکٹر پروفیسر ابراہیم سلفی‘ ظفر عباس نوید اور سیف اللہ کمیرپوری نے تجاویز دیتے ہوئے کہا کہ مسلک کے لوگ ایک دوسرے کے خلاف باتیں نہ کریں۔ اس کا سد باب ہونا چاہیے۔ جنوبی پنجاب میں دینی پروگرام ہونے چاہئیں۔ مدارس اور مساجد کی رجسٹریشن کے کام کو آسان بنایا جائے۔ امیر پنجاب نے جواب میں کہا کہ ایک مہینے میں کم از کم آٹھ پروگرام ہر ضلع میں ہونے چاہئیں۔ سالانہ کانفرنس بھی ہو اور صوبائی نائب امراء وناظمین کی نگرانی میں ہوں۔ بہاولنگر کے امیر قاری عبدالحمید صدیقی نے کہا کہ وہ ہر جمعرات کو پروگرام کرتے ہیں جس کا اچھا اثر ہوا ہے۔ مولانا اکرم شاکر نے کہا کہ تبلیغی کے ساتھ تنظیمی پروگرام بھی ہونے چاہئیں۔ امیر پنجاب نے کہا کہ غیر تنظیمی پروگراموں کی حوصلہ شکنی ہونی چاہیے۔ میاں اسلم صدیقی نے کہا کہ نائبین کی ڈیوٹیاں لگائی جائیں‘ ہر ایک نائب کو ایک لاکھ روپیہ جماعت کو جمع کرانا چاہیے۔ جہانزیب قریشی نے سابقہ قیادت کو خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ ہمیں آپس میں محبت اور احترام کو فروغ دینا چاہیے۔ عبدالستار مظفر گڑھ سے جنوبی پنجاب کا دورہ کرنے کی ترغیب دی۔ حافظ عبدالوحید نے کہا کہ میں آج کے کامیاب اجلاس پر قیادت کو مبارکباد دیتا ہوں۔ انہوں نے تنظیمی اور تربیتی پروگرام کرنے پر زور دیا۔ ڈاکٹر حمود لکھوی نے کہا کہ پورے پاکستان میں تنظیم کو مضبوط کیا جائے تا کہ آنے والے بلدیاتی انتخابات میں جماعت اہم کردار ادا کر سکے۔ اسی دوران ظہر کی اذان ہوئی۔ امیر محترم نے مختصر ہدایات دیں۔ آپ نے فرمایا کہ نئی قیادت کو پہلا بھر پور اجلاس کرنے پر مبارکباد دیتا ہوں اور کہا کہ پنجاب ایک بڑا اور مضبوط صوبہ ہے۔ یہ دوسرے صوبوں کی نسبت فعال بھی ہے۔ انہوں نے شیخ الحدیث مولانا عبداللہ a کا واقعہ سنایا اور کہا کہ رابطہ دونوں طرف سے ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سابقہ صوبائی قیادت پروفیسر عبدالستار حامد امیر اور میاں محمود عباس ناظم مرحوم نے بہترین کام کیا۔ آپ نے کہا کہ ہماری جماعت بنیادی طور پر ایک دعوتی اور تبلیغی جماعت ہے۔ لہٰذا دعوت کے کام کو اولیت دیں۔

یہ پڑھیں:

نماز ظہر کے بعد دوبارہ اجلاس شروع ہوا۔ امیر پنجاب نے بحث کو سمیٹتے ہوئے کہا کہ ہر ضلع کا سال میں ایک دفعہ تربیتی اجلاس ہو۔ صوبائی قیادت دیگر سکالرز کے ساتھ آئے گی۔ ضلعی وشہری امراء وناظمین کا اجلاس بھی بلائیں گے۔ نیٹ ورک مضبوط کریں گے۔ مساجد کو کیٹگرائز میں تقسیم کریں (اے) اور (بی)۔ کیٹگری اے میں خالص جماعتی مساجد۔ کیٹگری بی میں باقی اہل حدیث مساجد اور جماعت کو تھانے کی سطح تک منظم کریں۔ ہفت روزہ اہل حدیث لگوانے پر زور دیا۔

اگلی شق اہداف پر گفتگو کرتے ہوئے ناظم پنجاب حافظ یونس آزاد نے کہا کہ ہم سب مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے ترجمان ہیں۔ اس کو ہم نے مضبوط کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نبی کریمe نے ہر مسلمان ہونے والے صحابی کو تنظیم کے ساتھ وابستہ کر دیا۔ اسی تنظیم کا ہی نتیجہ تھا کہ ہجرت کے چند سال بعد مکہ فتح ہو گیا۔ انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ ہم ان شاء اللہ اپنے اسلاف کی روایات کو زندہ رکھیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہم بزرگوں کا احترام کرتے ہیں اور کریں گے۔ امیر محترم کی ہدایات پر ۱۰۱ فیصد عمل کریں گے۔ پروفیسر عبدالستار حامد‘ میاں محمود عباس کے کام کو بڑے اچھے الفاظ میں سراہا۔

چوتھی شق اضلاع کے دورہ جات کے سلسلہ میں امیر پنجاب نے کہا کہ ہم عنقریب آپ کو شیڈول دیں گے جس کے مطابق اکتوبر‘ نومبر میں دورے کریں گے۔

اس کے بعد ناظم اعلیٰ ڈاکٹر حافظ عبدالکریمd نے خطاب فرماتے ہوئے کہا کہ {قُلْ ہٰذِہِ سَبِیْلِیْ اَدْعُوْا اِلَی اللّٰہِ} صوبائی قیادت کے بھر پور اجلاس پر خوشی کا اظہار کیا۔ انہوں نے حافظ عبدالحمید عامر کو خراج تحسین پیش کیا۔ انہوں نے کورونا وبا کے دوران وفات پانے والے علماء‘ شیوخ الحدیث S کا تذکرہ کیا اور ان کی مغفرت اور بلندی درجات کے لیے دعا کی۔ آپ نے کہا کہ اضلاع کے دورے منظم کریں‘ ہم بھی مرکز کی طرف سے ان کے ساتھ چلیں گے۔ انہوں نے صوبائی قیادت سے کہا کہ ڈویژنل اور ضلعی کانفرنس رکھیں‘ خیبر پی کے کے دورہ کی تعریف کی‘ ہزاروں کی تعداد میں صوبہ سرحد میں لوگ جماعت کے ساتھ ملے ہیں۔ مولانا عبدالسلام رستمی اور مولانا عبدالعزیز نورستانی کے کام کی تعریف کی۔ انہوں نے ہفت روزہ اہل حدیث کی توسیع اشاعت پر زور دیا۔ فنڈ کو مضبوط کرنے پر بھی زور دیا۔ اہل حدیث یوتھ فورس کو منظم کرنے پر زور دیا۔ صوبائی بیت المال کو مضبوط کریں۔

یہ پڑھیں:

ان کے بعد امیر پنجاب نے مختلف افراد اور اضلاع کی طرف سے جو فنڈ آیا اس کا اعلان کیا۔ مولانا نعیم بٹ نے اپنے خطاب میں فرمایا کہ میں تو دین اسلام کے فروغ کے لیے اپنا تن من دھن لگا چکا ہوں۔ میں نے اپنا‘ جماعت کا اور خاندان کا احتساب کرنا اپنا ماٹو بنایا ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج میں بہت خوش ہوں کہ کورونا کی وجہ سے جماعت کا کام رکا نہیں بلکہ سوشل میڈیا پر جاری ہی نہیں بلکہ تیز رہا۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت تحفظ ختم نبوت میں جتنا کام مرکزی جمعیت نے کیا کسی دوسری جماعت نے نہیں کیا۔ تحفظ ناموس صحابہ پر جتنا کام ہم نے کیا اتنا کسی نے نہیں کیا۔ جتنے پروگرام جلسے وکانفرنسیں‘ جلوس ریلیاں بڑے بڑے اور کامیاب مرکزی جمعیت واہل حدیث یوتھ فورس کے ہوئے کسی اور کے نہیں ہوئے۔ انہوں نے سابق قیادت کی تعریف کی۔

آخر میں سرپرست پنجاب مولانا سید سبطین شاہ نقوی نے خطاب کیا اور کہا کہ جس طرح سابق قیادت نے کام کیا ہے ہم اس سے آگے بڑھنے کی کوشش کریں گے۔ انہوں نے تربیت کے حوالے سے کہا کہ جامعہ سلفیہ ام المدارس ہے۔ وہاں پروگرام رکھا جائے۔ اساتذہ اور علماء کی تربیت کا اہتمام ہونا چاہیے۔ ایک کمیٹی بنائی جائے اور جماعت کا کوئی مفتی اعظم مقرر کیا جائے۔ تربیتی پروگرام کیے جائیں۔ سالانہ بجٹ بنایا جائے اور مربوط اور منظم انداز سے کام کیا جائے۔ امن کمیٹیوں میں بھی اپنے نمائندے مقرر کیے جائیں‘ جماعتی ذمہ دار اپنی ذمہ داریوں کو پورا کریں۔

آخر میں ناظم پنجاب حافظ یونس آزاد نے کہا کہ آج کی میزبانی ہمارے ناظم مالیات حافظ الطاف بھٹی صاحب نے کی ہے۔ انہوں نے حاضرین اجلاس کے لیے پر تکلف کھانے کا انتظام کیا ہے۔ تمام حاضرین نے کھانا کھایا۔ اجلاس میں قرار دادیں منظور کی گئیں۔

1       شیعہ عالم آصف رضا علوی کو صحابہ کرام] کے بارے میں ہرزہ سرائی پر قرار واقعی سزا دی جائے۔

2       نوجوان عالم دین ابوبکر معاویہ کو فورا رہا کیا جائے۔

3       موٹر وے پر خاتون سے ہونے والی زیادتی پر مجرموں کو قرار واقعی سزا دی جائے۔

یہ پڑھیں:

اجلاس میں صوبہ بھر سے اراکین کابینہ وعاملہ نے بھر پور طریقے سے شرکت کی اور جماعتی وابستگی کا ثبوت دیا۔ شرکاء نے اجلاس کی مینجمنٹ کو دیکھ کر مثالی اجلاس قرار دیا۔ مجموعی طور پر بہترین انتظامات پر حاجی نواز مغل صاحب کو مبارکباد دی اور انتظامات کو سراہا۔


2 comments:

  1. السلام علیکم اللہ پاک جماعت کو دن دگنی رات چوگنی ترقی عطا فرما امین ابوحذیفہ محمد المدنی مدنیہ منورہ مسجد نبوی سے

    ReplyDelete
    Replies
    1. وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
      اکرمکم اللہ اخی الکریم
      اپنے مضامین سے ھفت روزہ اھل حدیث کو مستفید کرنا چاھیں تو درج ذیل ای میل پر مضامین ارسال فرٰمائیں:
      weeklyahlehadith@yahoo.com
      weeklyahlehadith@gmail.com

      Delete

Pages