مدیر اعلیٰ بشیر انصاری مرحوم کا تحریری بانکپن 20-22 - ھفت روزہ اھل حدیث

تازہ ترین

Friday, October 16, 2020

مدیر اعلیٰ بشیر انصاری مرحوم کا تحریری بانکپن 20-22

ھفت روزہ اھل حدیث,مدیر اعلیٰ بشیر انصاری,تحریری بانکپن,مدیر اعلیٰ بشیر انصاری کا تحریری بانکپن,
 

مدیر اعلیٰ بشیر انصاری مرحوم کا تحریری بانکپن

(پہلی قسط)         تحریر: جناب مولانا حمید اللہ خاں عزیز

بلائے جان ہے غالب! اس کی ہر بات

عبارت کیا‘ اشارت کیا‘ ادا کیا

کوئی قوم یا جماعت اس وقت تک درجہ کمال کو نہیں پہنچ سکتی جب تک کہ وہ علمی وفکری اور ادبی وصحافتی طور پر خود کفیل نہ ہو۔ بلکہ معاشرے کے دیگر افراد کے قلوب واذہان کو متاثر کرنے کی صلاحیت نہ رکھتی ہو۔ علم وقلم‘ فروغ ادب اور مطالعہ کتاب فی زمانہ ایک مؤثر ہتھیار ہے‘ اس کو ترک کر کے قومیں بام عروج پر نہیں پہنچ سکتیں۔ قلم سے تحریر اور کتابیں وجود میں آتی ہیں۔ قرآن مجید میں بایں الفاظ اس کا ذکر آیا ہے:

’’جس نے قلم سے تعلیم دی‘ انسان کو اس بات کی تعلیم دی جو وہ نہیں جانتا تھا۔‘‘ (العلق: ۴-۵)

یہ پڑھیں:        وفاؤں کا پیکر تھا جو چل بسا ہے

یہی وجہ ہے کہ اربابِ علم ودانش‘ اصحاب فضل‘ دانشوروں اور علماء نے اپنی فکری اور علمی ذمہ داری کو قبول کرتے ہوئے نسل انسانیت کو قلم وتحریر کے ذریعے جگر لخت لخت کا گلدستہ پیش کیا۔

 انجمن آرزو میں گوہر رشک:

مولانا بشیر انصاریa اہل علم وفضل کی اس جماعت میں سے تھے جنہوں نے اپنی عالمانہ صحافت کے ذریعے علم وادب‘ قرطاس وقلم کی نبض شناسی کے ساتھ ساتھ قرآن وسنت کے افکار کو متاع زیست سمجھتے ہوئے انجمن آرزو میں اپنا ذوق وشوق بکھیرتے گوہر رشک بنایا۔

انہوں نے متاع حیات کے اٹھاسی میں سے پچپن برس دشت صحافت کی آبلہ پائی کرتے گذارے۔ ان کی زندگی کا ایک ایک لمحہ اور عمر عزیز کی ایک ایک ساعت علوم صحافت سے وابستہ رہی۔ گویا نقشہ وہ ہے کہ                            ؎

ما ومجنوں ہم سبق بودیم در دیوانِ عشق

او بصحرا رفت وما در کوچہ ہا رسوا شدیم

 اداریے:

ز فرق تا قدمش ہر کجا کہ می نگرم

کرشمہ دامنِ دل می کشد کہ جا اینجا ست

ممدوح گرامی مولانا بشیر انصاریa نے میدان صحافت میں چوٹی کے علمی اور فکری جرائد کی ادارت کی اور علم وادب کا ایک جہان آباد کیا۔ ہفت روزہ ’’الاسلام‘‘، ہفت روزہ ’’الیوم‘‘، ماہنامہ ’’ترجمان الحدیث‘‘ سے شروع ہونے والے ادارتی سفر کا اختتام ہفت روزہ ’’اہل حدیث‘‘ (لاہور کے کم وبیش ۳۲ سالہ ادارت پر ہوتا ہے۔

انہوں نے ایک دانشور‘ محقق اور نقاد صحافی کی حیثیت سے اداریے تحریر کیے جن میں بلاشبہ مولانا سید عطاء اللہ شاہ بخاریa کا بانکپن‘ مولانا ظفر علی خاںa کی سلاست‘ شورش کاشمیریa کا جوبن اور شہید ملت علامہ احسان الٰہی ظہیرa کا استدلال نمایاں ہوتا ہے۔

یہ پڑھیں:        مدیر اعلیٰ بشیر انصاری سے ایک یادگار انٹرویو

سابق ناظم اعلیٰ مولانا میاں محمد جمیلd‘ مرحوم کے قلم کو ادبی دنیا میں سند مانتے ہوئے لکھتے ہیں:

’’جناب بشیر انصاری (مدیر اعلیٰ ہفت روزہ ’’اہل حدیث‘‘) کا شمار ملک کے نامور ادیبوں میں ہوتا ہے‘ بالخصوص مذہبی رسائل وجرائد کے میدان میں انہیں ایک نمایاں مقام حاصل ہے۔ ان کا قلم ادبی دنیا میں سند کی حیثیت رکھتا ہے اور ان کی صحافتی خدمات تقریبا ربع صدی پر محیط ہیں۔‘‘ (تحریک اہل حدیث‘ افکار وخدمات‘ ص: ۶)

 اداریوں کی امتیازی حیثیت:

انصاری صاحبa کے تحریر کردہ اداریے دل ودماغ کی ظلمتوں کو اجالتے تھے۔ موصوف گرامی تحریر میں عمدہ گرفت رکھتے تھے‘ اس لیے ہر موضوع پر بہت فکر انگیز‘ مدلل اور منظم لکھتے۔ تحریر میں وہ نکات ترتیب دیتے تو لوازمہ قرآن وسنت سے فراہم کرتے۔ اشعار کا انتخاب کرتے‘ ان کی تحریر قارئین پر سحر طاری کیے رکھتی اور پڑھنے والے ایسے محو ہو جاتے کہ ان کو احساس ہی نہ رہتا کہ کتنا وقت بیت چکا ہے۔ بقول شخصے:            ؎

فروغ مہر بھی دیکھا‘ نمود گلشن بھی

تمہارے سامنے کس کا چراغ جلتا ہے

شیخ الحدیث مولانا عبدالستار الحمادd اپنی ایک تحریر میں رقم طراز ہیں:

’’انصاری صاحبa کی علمی‘ ادبی‘ سیاسی خصوصیات کی جامع صحافت کا دور ہفت روزہ ’’اہل حدیث‘‘ کی ادارت سے شروع ہوا اور آخر دم تک جاری رہا۔ اس دوران ان کا مقام ایک صحافی کا نہیں بلکہ صحافت کے استاد رہنما اور مربی کا بن گیا۔ جس توجہ‘ محنت اور ایثار نیز میانہ روی‘ استقامت اور صحت وسلامتی طبع کے ساتھ انہوں نے یہ وقت گذارا‘ وہ ایک آئیڈیل اور نمونہ کی حیثیت رکھتا ہے۔‘‘ (ہفت روزہ اہل حدیث: ج۵۱‘ ش ۱۸‘ ۱۸ تا ۲۴ ستمبر ۲۰۲۰ء)

یہ پڑھیں:      

شیخ الحدیث مولانا عبداللہؒ (گوجرانوالہ) کی رائے:

شیخ الحدیث مولانا محمد عبداللہa مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے سرپرست‘ نامور علمی شخصیت تھے۔ ان کی ذات اس شش جہات ہیرے کی مانند تھی کہ جس کی ہر نوک سے جیسے سورج کی شعاعیں کئی رنگوں اور نگوں کی روشنیاں پھیلا رہی ہوں اور ہر آئینہ اسے اپنا ہم آہنگ سمجھ رہا ہو۔ موصوف محترم مولانا بشیر انصاریa کے تحریر کردہ ’’الاسلام‘‘ اور ’’اہل حدیث‘‘ کے اداریوں کو صحافت وادب کا سنگ میل قرار دیتے تھے۔ انہوں نے اپنی ایک تقریر میں فرمایا:

’’مطلع صحافت پر ’’اہل حدیث‘‘ کی چمک جناب بشیر انصاری کی ذات‘ ان کے تحقیقی اور سنجیدہ اداریوں کے باعث ہے۔ ان کے اداریے نفاست اور ذوق جمال کے آئینہ دار ہوتے ہیں۔ جس میں اکابر سلف کے نوادرات کے عکس اور مسائل جدیدہ پر اہل علم وکمال کی آراء شامل ہوتی ہیں۔ اللہ کرے زور قلم اور زیادہ۔‘‘

کسی نے کیا خوب کہا ہے:      ؎

ممکن نہیں کہ تم سے زمانہ ہو بے نیاز

تم ہو جہاں میں گوہر نایاب کی طرح

 اداریوں کے جلی عنوانات:

ہم نے جو طرزِ فغاں کی ہے قفس میں ایجاد

فیض گلشن میں وہی طرز بیاں ٹھہری ہے

یہ پڑھیں:        تم کیا گئے کہ روٹھ گئے دن بہار کے

مولانا بشیر انصاریa نے اپنی پچپن سالہ صحافت میں بلامبالغہ سینکڑوں اداریے تحریر کیے جو بادی النظر میں بے شمار عنوانات کو گھیرے ہوئے ہیں۔ ان کے اداریوں کے وہ جلی موضوعات جن کے تحت انہوں نے مختلف اوقات میں اداریے سپرد قلم کیے ان کی تعداد شمار سے باہر ہے۔

ایک ایک جلی عنوان کے تحت ان کے متعدد کالمز تلاش کیے جا سکتے ہیں۔ مثال کے طور پر مسئلہ کشمیر یا مسئلہ فلسطین کے موضوع پر ان کے اداریے جمع کیے جائیں تو ہر ایک موضوع پر دو‘ چار کتابیں مرتب ہو سکتی ہیں۔ اسی طرح جماعت وتنظیم کے موضوع پر لکھے گئے اداریے بھی ایک جامع کتاب کا احاطہ کر سکتے ہیں۔ پاکستانیت کے عنوان پر ان کے اداریے شمار سے باہر ہیں۔ کوشش کر کے انہیں ترتیب دی جائے تو ایک درجن کتابیں نکل سکتی ہیں۔

میں نے انصاری صاحب کی پچپن سالہ صحافتی جہتوں کا بڑی عرق ریزی سے مطالعہ کیا ہے۔ اس سے ان کے اداریوں کے بے شمار جلی عنوانات سامنے آئے ہیں۔ ان کی تعداد سینکڑوں میں ہو سکتی ہے۔ یہاں ہم ان کے ایک سو سے زائد عنوانات یا موضوعات درج کرتے ہیں جو اہل علم وادب کے لیے نہایت خاصے کی چیز ہو گی:

\       دعوت کتاب وسنت                     \       تاریخ اسلام

\       سیرت نبویe                        \       علم وادب

\       تاریخ اہل حدیث                         \       افکار اہل حدیث

\       منہج اہل حدیث                           \       تذکار مشاہیر علمائے اہل حدیث

\       اولیات اہل حدیث                      \       تحریک اہل حدیث پاک وہند

\       سیاسیات پاکستان میں اہل حدیث کا کردار

\       تحریک ختم نبوت میں اہل حدیث کی مساعی

\       تاریخ مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان

\       قائدین مرکزی جمعیت اہل حدیث

\       تذکرہ مشاہیر عالم اسلام                \       صداقت مسلک اہل حدیث

\       شہدائے اہل حدیث                     \       وفیات مشاہیر اہلحدیث

\       حجیت حدیث                               \       مسئلہ کشمیر

\       مسئلہ فلسطین                               \       سقوط افغانستان

یہ پڑھیں:        مدیر اعلیٰ ہفت روزہ ’’اہل حدیث‘‘ چل بسے

\       سقوط ڈھاکہ                               \       سعودی عرب

\       صحافت                                      \       سیاست

\       اسلامی تحریکوں کا تعارف              \       جلسے اور کانفرنسیں

\       عدلیہ                                         \       فرقہ واریت

\       اتحاد امت                                 \       احیائے توحید

\       رد شرک                                   \       رد تقلید

\       احیائے سنت رسول اللہe          \       رد بدعات

\       دعوت وتحریک                           \       اصلاح احوال

\       سماجی برائیوں کا تعاقب                 \       معاشیات

\       اقتصادیات                                \       بے روزگاری ومہنگائی

\       آزادی اظہار رائے                       \       قومی اثاثے

\       تحریک پاکستان کا سفر                    \       اتحاد عالم اسلام  

\       سود                                           \       حقوق نسواں

\       حدود آرڈیننس                           \       آمریت

\       دفاع بیت المقدس                       \       یہودیت

\       عیسائیت                                    \       مرزائیت

\       یوم ختم نبوت                              \       اسلام اور سائنس           

\       عالم اسلام پر صلیبی یورشیں           \       روشن خیالی

\       رشوت ستانی                               \       جمہوریت کے برگ وبار   

یہ پڑھیں:        مسکراتا چہرہ ... دھیمہ لہجہ

\       تصوف                                      \       جمہوری اقدار کی بحالی

\       مختلف مسالک میں اسلام کا پھیلاؤ    \       امریکی ریشہ دوانیاں

\       کرپشن                                       \       قومی اثاثے

\       مشاہداتی سفر                               \       نئے صوبوں کا مسئلہ         

\       نسوانی حکومت                            \       دفاع اصحاب رسول

\       واقعہ کربلا                                   \       غلبہ اسلام

\       فلسفہ قربانی                                 \       ہمارے ایٹمی اثاثے

\       ائمہ دین                                    \       ائمہ حدیث

\       عسکری آمریت                          \       اسلامی نظام کا نفاذ

\       صوبوں کے مسائل اور حل           \       اولیاء اللہ کون؟

\       مقامات مقدسہ                           \       اسلامی اقتصادی ماہرین    

\       لوڈشیڈنگ                                 \       صنعت وتجارت

\       زراعت                                     \       عوامی مسائل

\       ارتقائے صحافت                          \       بلوچستان میں ڈرون حملے

\       بھارت کی غنڈہ گردی                   \       اساس پاکستان

\       آئین پاکستان                              \       اسلامی تہذیب کے درخشاں پہلو

\       کالا باغ ڈیم                                 \       جماعتی امدادی سرگرمیاں

یہ پڑھیں:       شہسوار صحافت ... بشیر انصاری

\       یادِرفتگان                                  \       داعی کے اوصاف

\       امر بالمعروف ونہی عن المنکر         \       صدارتی آرڈیننس          

\       ڈاکٹر عافیہ صدیقی                         \       ناموس رسالت

\       قانون ناموس رسالت                  \       قانون حرمت قرآن

\       معاشرے کے مہلک گناہ              \       انفاق فی سبیل اللہ

\       سرمایہ دارانہ نظام                        \       معراج النبیe

\       حقوق مصطفیe                        \       معرکہ بدر وہلال

\       حقیقی عیدیں                               \       این جی اوز

\       اہلحدیث کی تعلیمی خدمات              \       او آئی سی کی ذمہ داریاں 

\       ایمانیات                                    \       صدارتی نظام

\       رابطہ عالم اسلامی                          \       بابری مسجد کا قضیہ           

\       وفاق المدارس                            \       دینی مدارس

\       عربی علوم وفنون                          \       ثقافتی جنگ

\       فوجی بغاوتیں                              \       سوشلزم

\       کیمونزم                                      \       بہائیت

\       دہشت گردی کے مضمرات          \       کراچی کے مسائل          

یہ پڑھیں:        دار العلوم سراجیہ کے شیخ الحدیث مولانا عبدالمنان سلفی

\       خطبات ائمہ حرمین                      \       پیغام عیدالاضحیٰ

\       پیغام عیدالفطر                            \       مقصد حیات

\       جہاد فی سبیل اللہ                          \       بے جا ٹیکسز

\       اسلامی سال نو                             \       اقوام متحدہ کی ذمہ داریاں

\       گلوبلائزیشن                                \       منشیات کی تباہ کاریاں 

\       پاک بھارت مذاکرات                  \       پیپلز پارٹی کی کارکردگی

\       مسلم لیگ ن کی کارکردگی              \       پاکستان کا سیاسی منظر نامہ

\       متحدہ مجلس عمل‘ اہداف ومقاصد    \       صلیب وہلال کی کشمکش

\       دفاعی تقاضے                               \       قادیانی کافر کیوں؟!

\       امریکی صدور کے دورے              \       طالبانِ علوم نبوت

\       قومی یکجہتی                                  \       اسلام میں جنگ کا تصور

\       خواتین اسلام کی ذمہ داریاں          \       حقوق العباد

\       نصاب تعلیم اور طرز تعلیم             \       دفاع پاکستان

\       سب سے پہلے پاکستان کا نعرہ           \       شریعت بل

یہ پڑھیں:        علوم اسلامیہ کا سائباں جو اُٹھ گیا ... ڈاکٹر عبدالرؤف ظفر

\       حسبہ بل                                    \       فتنوں کی راہ

\       ۱۱/۹ واقعات                             \       کشمیری رہنماؤں کی مظلومیت

\       قومی انتخابات                              \       بلدیاتی انتخابات

\       زلزلے‘ عبرت کا سامان                \       نصرت الٰہی سے محروم مسلمان

\       اجتماعیت‘ وقت کی ضرورت           \       این آر او کے مجرم           

\       یوم تکبیر                                    \       یوم دفاع پاکستان

\       امت کی نشأۃ جدیدہ کے لیے کوششیں          \       اصلاح معاشرہ

\       قیام عدل وانصاف                       \       مشرف دورِ حکومت

\       سعودی عرب کے نمایاں کارنامے  \       توبہ واستغفار… وغیرہ وغیرہ

یہ صرف چند عنوانات ہیں۔ انہوں نے اپنے اداریوں میں دعوت ومنہج اہل حدیث کے علاوہ انسانیت کا درس دیا‘ معاشرے کا کوئی طبقہ نہیں جسے انصاری صاحب مرحوم نے مخاطب کرنے میں پس وپیش سے کام لیا ہو۔               ؎

ہمارے خونِ دل نے میکدے کی آبرو رکھ لی

وگرنہ صحبت پیر مغاں میں اب دھرا کیا ہے

یہ پڑھیں:        شیخ القراء  قاری محمد یحییٰ رسولنگری

 اداریوں کی مختلف جہات:

خروش نعرۂ پیکار لے کے آیا ہوں

حکایت رسن ودار لے کر آیا ہوں

مخدوم محترم مولانا بشیر انصاریa کے تحریر کردہ سینکڑوں اداریے مختلف جہات پر مشتمل ہیں۔ ان خورشید جہاں اداریوں کی روشنی میں انہیں درج ذیل عنوانات میں منقسیم کرتی ہے:

1       دعوتی‘ علمی اور مسلکی اداریے                     2       سیرت النبیe پر اداریے

3       ختم نبوت کے موضوع پر اداریے               4       قانون حرمت قرآن وناموس رسالت پر اداریے

5       قومی وسیاسی موضوع پر اداریے                  6       عالم اسلام کو درپیش مسائل پر ادرایے

7       عوامی مسائل پر اداریے                            8       سماجی ومعاشرتی عنوان پر اداریے

9       تنظیمی وجماعتی اداریے                              0       تاریخ اہل حدیث ورجال حدیث پر اداریے

!       صحافت حاضرہ پر اداریے                          @       ادبی موضوعات پر اداریے

یہ پڑھیں:       پروفیسر عبدالرحمن لدھیانوی ... عظمت وسادگی کا حسین پیکر

مولانا بشیر انصاری مرحوم کے بے شمار اداریوں کے مطالعے کے بعد یہ بارہ قسم کے اداریے میرے سامنے آئے ہیں جس میں انہوں نے بڑی حوصلہ مندی‘ بے باکی‘ خوداعتمادی‘ جرأت اور استقامت کے ساتھ اپنے رشحات فکر قوم کے سامنے پیش کیے۔ ان کے سامنے اسلام کا یہ نظریہ ابلاغ تھا:

[کفی بالمرء کذبا أن یحدث بکل ما سمع۔] (الحدیث)

’’کسی کے جھوٹے ہونے کے لیے یہی بات ہی کافی ہے کہ وہ ہر ایسی بات (یا خبر جس کی صحت معلوم نہ ہو) کو آگے بیان (یا نشر اور شائع) کر دے جو اس نے سنی ہو۔‘‘ …… (جاری)


درس بخاری شریف


دینی مدارس کے طلبہ کے لیے انتہائی مفید


No comments:

Post a Comment

Pages