بھارت کی بربریت اور دنیا کی خاموشی 20-24 - ھفت روزہ اھل حدیث

تازہ ترین

Friday, October 30, 2020

بھارت کی بربریت اور دنیا کی خاموشی 20-24

ھفت روزہ اھل حدیث, ہفت روزہ اہل حدیث, اھلحدیث, اہلحدیث, بھارت کی بربریت اور دنیا کی خاموشی,
 

بھارت کی بربریت اور دنیا کی خاموشی

 

بریڈفورڈ(پ۔ر) مرکزی جمعیت اہل حدیث برطانیہ کی مجلس نظامت کاہنگامی اجلاس کشمیرکی موجودہ صورتحال پر گزشتہ روز ڈیوزبری ویسٹ یارکشائر میں منعقد ہواجس میں مقبوضہ کشمیر اور مقبوضہ فلسطین میں دشمن افواج کی درندگی اور جارحیت کی شدیدمذمت کی گئی۔

یہ پڑھیں:            جگر چھلنی چھلنی ہے

اجلاس کی صدارت امیر مرکزی جمعیۃ اہل حدیث برطانیہ مولانامحمد ابراہیم میرپوری نے کی، قاری ذکاء اللہ سلیم کی تلاوت قرآن مجید کے بعدمرکزی  ناظم اعلی حافظ حبیب الرحمن حبیب نے اجلاس کی غرض و غایت بیان کرتے ہوئے کہا کہ ’’امت اسلام جہاں اور بہت سی مصیبتوں اور مشکلات سے آزمائی جارہی ہے وہاں مقبوضہ فلسطین میں یہودکی پالیسیوں اور مقبوضہ کشمیرمیں ہندو حکومت کے جبرو ستم سے انسانیت چیخ اٹھی ہے لیکن دنیا کے مہذب ممالک کہلانے والے خاموشی اختیار کیے ہوئے ہیں جو بہت گھمبیرہے ۔‘‘

مولاناحبیب الرحمن نے مزید کہا کہ ’’بھارت کے زیر تسلط جموں و کشمیر میں تاریخ کاسب سے طویل لاک ڈاؤن عالم انسانیت کیلئے باعث شرم ہے جس کو۴ا ماہ کا طویل عرصہ مکمل ہوچکاہے اور نام نہاد مہذب دنیا کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگ سکی۔‘‘

اجلاس میں گفتگو کرتے ہوئے سابق ناظم اعلیٰ مولانا محمد شعیب میرپوری نے کہا کہ ’’موجودہ حالات میں مرکزی جمعیت اپنی ذمہ داریوں سے غافل نہیں رہ سکتی۔‘‘

مولاناشفیق الرحمن شاہین نے اظہارخیال کرتے ہوئے کہا کہ ’’اس سلسلہ میں مرکزی جمعیت اہل حدیث اپنی استطاعت کے مطابق انٹرنیشنل سطح پرایک فورم بنائے گی تاکہ مظلوم کشمیریوں کے درد وکرب کواجاگر کیاجائے۔‘‘

یہ پڑھیں:            ریاست مدینہ میں بت کدے برباد کیے جاتے ہیں

سیکرٹری اطلاعات مولاناعبدالاعلیٰ درانی نے اعداد وشمار پیش کرتے ہوئے کہا کہ ’’مقبوضہ کشمیر کے ضلع پلوامہ میں ہونے والے حالیہ حملے میں چھ خواتین سمیت متعدد کشمیری نوجوان شہید ہوچکے ہیں اوربھارتی پیرا ملٹری فورسز کی جارحیت برابرجاری ہے، نریندر مودی کی سربراہی میں بھارت کی فسطائی حکومت کی طرف سے گذشتہ سال 5 اگست کو نافذ کیے جانے والے فوجی محاصرے سے مقبوضہ علاقے میں کشمیریوں کے معمولات زندگی مسلسل بری طرح متاثر ہورہے ہیں جونہایت تشویشناک ہیں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی کی جانب سے  فوجی محاصرے کو14ماہ مکمل ہوچکے ہیں، بھارتی فوجیوں کی جانب سے پرامن مظاہرین پر گولیوں ، پیلٹ گنز اور آنسو گیس کے بے دریغ استعمال سے کم از کم 1498افراد شدید زخمی ہوئے ۔1496افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔6خواتین سمیت253کشمیری شہید ہوئے۔ فوجیوں نے اس عرصے میں 89خواتین کی بے حرمتی کی اور968گھروں اور عمارتوں کو نقصان پہنچایا گیا ۔ لگتا ہے بھارت نے اپنے فوجیوں کو جعلی مقابلوں اور حراست کے دوران کشمیریوں کوقتل کرنے کی کھلی چھٹی دے رکھی ہے ۔یہ سلسلہ آخر کب تک جاری رہے گا۔‘‘

انہوں نے مزیدکہا کہ ’’مجلس نظامت مرکزیہ اس صورتحال پر شدید دکھ اور رنج و حزن کا اظہار کرتی ہے اورجلد ہی انٹر نیشنل سطح پرایک کانفرنس کروائے گی ۔‘‘

ناظم تبلیغ  مولانا شریف اللہ شاہد نے بتایاکہ ’’اسی  ماہ کے آخرمیں جمعیت کی جانب سے منعقدہ کانفرنس میں آزاد کشمیر کے موجودہ صدرفاروق حیدر کی شرکت کنفرم ہوگئی ہے ان کے علاوہ برطانیہ سے بھی لارڈز کی شرکت کیلئے رابطے جاری ہیں کیونکہ مقبوضہ کشمیرکی صورتحال نہایت تشویشناک اور ناقابل برداشت ہوچکی ہے اس پر عالم انسانیت کے ضمیرکو جھنجوڑنافرض بن گیا۔‘‘

یہ پڑھیں:            توہین رسالت اور ہمارا طرز عمل

اجلاس کے اختتام پر ناظم اعلیٰ نے مقامی جمعیت کی برانچ کے ذمہ داروں حاجی محمد اسحق اور دیگر اراکین جمعیت کی جانب سے مہمان نوازی کاشکریہ ادا کیا۔


No comments:

Post a Comment

Pages