کتابتِ حدیث شریف .. ایک تسلسل 20-25 - ھفت روزہ اھل حدیث

تازہ ترین

Friday, November 06, 2020

کتابتِ حدیث شریف .. ایک تسلسل 20-25

ھفت روزہ اھل حدیث, کتابت حدیث شریف, ایک تسلسل,
 

کتابتِ حدیث شریف ..  ایک تسلسل

 

تحریر: جناب مولانا عبید اللہ لطیف

قارئین! قبل اس کے کہ قادیانیوں کے نظریہ حدیث پر کچھ عرض کروں مقام حدیث اور حفاظت حدیث پر چند معروضات پیش کرنا چاہتا ہوں تاکہ اصل حقائق کو سمجھنے میں آسانی ہو کیونکہ مرزا قادیانی لکھتا ہے کہ

’’ان لوگوں کے خیالات کی بناء احادیث موضوعہ پر ہے جو قرآن شریف کی مہر سے خالی ہے مگر ہم قرآن شریف کو ان احادیث کی خاطر نہیں چھوڑ سکتے۔ قرآن شریف بہرحال مقدم ہے بھلا قرآن کو تو آنحضرتe نے خود جمع کیا لکھوایا اور پھر نمازوں میں باربار پڑھ کر سنایا اگر احادیث بھی ویسی ہی ضروری ہیں تو ان میں سے بھی کسی کو اسی طرح جمع کیا اور بار بار سنایا اور دور کیا۔‘‘ (ملفوظات جلد 3 صفحہ 211)

یہ پڑھیں:              سورۂ فاتحہ کے شروع میں ’’بسم اللہ الرحمن الرحیم‘‘ پڑھنا (اول)

جہاں تک بات ہے احادیث کو جمع کرنے اور لکھوانے کی تو احادیث کو جمع کرنے اور لکھنے کا حکم۔ خود نبیe نے دیا اور احادیث نبیe کے دور میں ہی لکھی جاتی رہیں اور جمع بھی کی گئیں جس کی تفصیل ان شاءاللہ آگے آئے گی ۔

اب بات رہ جاتی ہے کہ نبیe نے احادیث کا نمازوں میں دور نہ کیا تو یہ مرزا قادیانی کی جہالت کا اعلی ترین ثبوت ہے کہ جسے بات کرتے ہوئے یہ تک خیال نہیں آیا کہ احادیث تین طرح کی ہوتی ہیں:

1       ایک قولی یعنی جو بات نبیe نے بیان فرمائی اس فرمان نبوی کو قولی حدیث کہتے ہیں۔

2       دوسری فعلی یعنی جو کام نبیe نے عملاً کر کے دکھایا۔

3       تیسری حدیث کی وہ قسم ہے کہ اگر نبیe کے سامنے کسی صحابی نے کوئی عمل کیا تو نبیe نے منع نہ فرمایا۔

اس سے ثابت ہوا کہ احادیث قرآن کریم کی تشریح ہیں جن کا نماز میں دور نہ کرنے کو احادیث کی اہمیت کم کرنے کے لئے بطور دلیل پیش کرنا جہالت کے علاوہ کچھ نہیں بلکہ نبیe کا باربار کسی کام کا حکم دینا اور اس کام کو عملا کر کے دکھانا ہی احادیث کا دور کہا جا سکتا ہے۔ اب آتے ہیں مرزا قادیانی کی تحریر کے اس حصے کی طرف جس میں اس نے کہا ہے کہ

’’ان لوگوں کے خیالات کی بناء احادیث موضوعہ پر ہے جو قرآن شریف کی مہر سے خالی ہے۔‘‘

حالانکہ مرزا قادیانی خود امام مہدی کے بارے میں تمام احادیث کو ضعیف قرار دے چکا ہے چنانچہ وہ اپنی کتاب براہین احمدیہ میں لکھتا ہے کہ

’’جیسا کہ تمام محدثین کہتے ہیں اور میں بھی کہتا ہوں کہ مہدی موعود کے بارے میں جس قدر حدیثیں تمام مجروح اور مخدوش ہیں اور ان میں ایک بھی صحیح نہیں … مگر دراصل یہ تمام حدیثیں کسی اعتبار کے لائق نہیں۔‘‘ (براہین احمدیہ، حصہ پنجم، مندرجہ روحانی خزائن، جلد 21، صفحہ 356)

یہ پڑھیں:              سورۂ فاتحہ کے شروع میں ’’بسم اللہ الرحمن الرحیم‘‘ پڑھنا (دوم)

اب جبکہ مرزا صاحب خود امام مہدی کے بارے میں تمام احادیث کو ضعیف اور ناقابل اعتبار قرار دے چکے ہیں اور امام مہدی کا ذکر قرآن کریم میں بھی نہیں تو مرزا صاحب کا اپنا دعوی مہدویت کس بنا پر ہے ؟ محترم قارئین ! جیسا کہ احادی پر مرزا قادیانی کا اعتراض بھی نقل کیا جا چکا ہے اور ویسے بھی جب کبھی کسی منکر حدیث اور قادیانی سے بات ہوتی ہے تو ان کی طرف سے احادیث پر سب سے پہلا اعتراض یہ کیا جاتا ہے کہ احادیث تو اڑھائی تین سو سال بعد لکھی گئی ہیں لہذا ہم انہیں نہیں مانتے حالانکہ جس طرح قرآن مجید کلام الٰہی ہونے کے سبب حجت ہے اسی طرح صحیح حدیث رسول بھی فرمان نبوی ہونے کے سبب حجت ہے۔ کیونکہ قرآن مقدس کی وضاحت اور تشریح جب تک فرمان نبوی سے نہ کی جائے تو دین اسلام ادھورا رہ جاتا ہے یہی وجہ ہے کہ قرآن مجید کے بارے میں رب کائنات نے فرمایا ہے کہ

’’پھر اس کو بیان کرنا بھی ہماری ذمہ داری ہے۔‘‘ (القیامة: 19)

نیز فرمایا:

’’اور ہم نے آپ کی طرف ذکر (قرآن مجید) نازل کیا تاکہ آپ لوگوں کے لیے واضح کر دیں جو ان کی طرف نازل کیا گیا۔‘‘ (النحل: 44)

حدیث رسول کے حجت ہونے کے بارے میں قرآن مقدس میں ارشاد ہے کہ

’’اور تمہیں جو کچھ رسول دے لے لو اور جس سے روکے رک جاؤ۔‘‘(الحشر)

محترم قارئین! جس طرح رب کائنات نے قرآن مجید کی حفاظت کی ذمہ داری اپنے ذمہ لی ہے اسی طرح قرآن مجید کی وضاحت یعنی حدیث رسول کی حفاظت کی بھی ذمہ داری لی ہے یہی وجہ ہے کہ نبی کریمu کے دور میں صحابہ کرام] قرآن مجید کو حفظ کرنے کے ساتھ ساتھ احادیث رسول کو بھی حفظ کیا کرتے تھے اور نبی کریمu کے دور میں ہی کتابت حدیث کا کام بھی شروع ہو گیا تھا۔ اسی سلسلہ میں حسن بن عمرو روایت کرتے ہیں کہ ایک مرتبہ ابو ہریرہt میرا ہاتھ پکڑ کر مجھے اپنے گھر لے گئے نبیe کی حدیثوں کی بہت سی کتابیں دکھائیں اور فرمایا کہ یہ میرے پاس مکتوب ہے۔ (بحوالہ فتح الباری207/1‘ تحت حدیث 113)

سنن ابوداود میں عبداللہ ابن عمرt سے روایت ہے کہ

سیدنا عبداللہ ابن عمرw فرماتے ہیں کہ میں ہر اس حدیث کو جو رسول اللہe سے سنتا یاد رکھنے کے لیے لکھ لیتا، تو قریش کے لوگوں نے مجھے لکھنے سے منع کر دیا، اور کہا: کیا تم رسول اللہe سے ہر سنی ہوئی بات کو لکھ لیتے ہو؟ حالانکہ رسول اللہe بشر ہیں، غصے اور خوشی دونوں حالتوں میں باتیں کرتے ہیں، تو میں نے لکھنا چھوڑ دیا، پھر رسول اللہe سے اس کا ذکر کیا، آپe نے اپنی انگلی سے اپنے منہ کی طرف اشارہ کیا اور فرمایا: لکھا کرو، قسم اس ذات کی جس کے ہاتھ میں میری جان ہے اس سے حق بات کے سوا کچھ نہیں نکلتا ۔ (سنن ابی داؤد کتاب العلم حدیث 3646)

صحابہ کرامؓ کے تحریری مجموعے

صحیفہ صادقہ:

عبداللہ بن عمرو بن العاصt کا ہزار احادیث پر مشتمل صحیفہ صادقہ یہ اب مسند احمد میں مکمل طور پر موجود ہے۔ اس صحیفے کی روایت عمرو بن شعیب بن محمد بن عبداللہ بن عمرو بن عاص کے توسط سے پوری طرح منقول ہے۔ اور اکابر محدثین نے اس روایت پر اعتماد کر کے اپنی کتابوں میں نقل کیا ہے ۔ (تاریخ الحدیث والمحدثین ص 210)

یہ پڑھیں:              خلیفۂ اول بلا فصل ... سیدنا ابوبکر صدیق t

صحیفہ عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ

اس میں صدقات اور زکوٰۃ کے احکامات درج ہیں امام مالکa فرماتے ہیں:

’’میں نے یہ صحیفہ پڑھا ہے عمر بن عبدالعزیزa نے جب تدوین حدیث کا کام شروع کیا تو یہ صحیفہ انہیں عمرt کے خاندان سے موصول ہوا۔‘‘ (موطا امام مالک ص 109)

صحیفہ عثمان رضی اللہ عنہ

اس صحیفے میں زکوٰۃ کے احکام درج تھے اس کے متعلق امام بخاریa کتاب الجہاد میں ابن الحنفیہ سے ایک روایت اس طرح لائے ہیں کہ

اگر علیt، عثمانt کو برا کہنے والے ہوتے تو اس دن ہوتے جب کچھ لوگ عثمانt کے عاملوں کی  (جو زکوٰۃ وصول کرتے تھے) شکایت کرنے ان کے پاس آئے۔ انہوں نے مجھ سے کہا عثمانt کے پاس جا اور یہ زکوٰۃ کا پروانہ لے جا۔ ان سے کہنا کہ یہ پروانہ آپe کا لکھوایا ہوا ہے۔ تم اپنے عاملوں کو حکم دو کہ وہ اسی کے مطابق عمل کریں۔ چنانچہ میں اسے لے کر عثمانt کی خدمت میں حاضر ہوا اور انہیں پیغام پہنچا دیا‘ لیکن انہوں نے فرمایا کہ ہمیں اس کی کوئی ضرورت نہیں ( کیونکہ ہمارے پاس اس کی نقل موجود ہے) میں نے جا کر علیt سے یہ واقعہ بیان کیا ‘ تو انہوں نے فرمایا کہ اچھا‘ پھر اس پروانے کو جہاں سے اٹھایا ہے وہیں رکھ دو۔ (صحیح البخاری کتاب الجھاد روایت نمبر 3111)

صحیفہ علی رضی اللہ عنہ

اس میں زکوٰۃ‘ صدقات‘ دیت ‘ قصاص‘ حرمت مدینہ ‘ خطبہ حجۃ الوداع اور اسلامی دستور کے نکات درج تھے۔ یہ صحیفہ سیدنا علیt کے بیٹے محمد بن حنفیہ کے پاس تھا۔ پھر امام جعفر کے پاس آیا اور انہوں نے حارث کو لکھ کر دیا۔ اسی صحیفے کے بارے میں بخاری شریف میں روایت ہے کہ

علیt نے بتلایا کہ ہمارے پاس کوئی کتاب نہیں ہے جسے ہم پڑھیں، سوا اللہ کی کتاب قرآن کے اور اس کے علاوہ یہ صحیفہ بھی ہے۔ بیان کیا کہ پھر وہ صحیفہ نکالا تو اس میں زخموں ( کے قصاص ) اور اونٹوں کی زکوٰۃ کے مسائل تھے۔ راوی نے بیان کیا کہ اس میں یہ بھی تھا کے عیر سے ثور تک مدینہ حرم ہے جس نے اس دین میں کوئی نئی بات پیدا کی یا نئی بات کرنے والے کو پناہ دی تو اس پر اللہ اور فرشتوں اور انسانوں سب کی لعنت ہے اور قیامت کے دن اس کا کوئی نیک عمل مقبول نہ ہو گا اور جس نے اپنے مالکوں کی اجازت کے بغیر دوسرے لوگوں سے مولات قائم کر لی تو اس پر فرشتوں اور انسانوں سب کی لعنت ہے، قیامت کے دن اس کا کوئی نیک عمل مقبول نہ ہو گا اور مسلمانوں کا ذمہ ( قول و قرار، کسی کو پناہ دینا وغیرہ ) ایک ہے۔ ایک ادنی مسلمان کے پناہ دینے کو بھی قائم رکھنے کی کوشش کی جائے گی۔ پس جس نے کسی مسلمان کی دی ہوئی پناہ کو توڑا، اس پر اللہ کی، فرشتوں اور انسانوں سب کی لعنت ہے قیامت کے دن اس کا کوئی نیک عمل قبول نہیں کیا جائے گا۔ (تدوین حدیث برہان دہلی و صحیح بخاری حدیث 6755)

یہ پڑھیں:              اللہ کی رضا والا عمل

میں نے علیt سے پوچھا، کیا آپ کے پاس کوئی ایسی چیز بھی ہے جو قرآن مجید میں نہیں ہے اور ایک مرتبہ انہوں نے اس طرح بیان کیا کہ جو لوگوں کے پاس نہیں ہے۔ اس پر انہوں نے کہا کہ اس ذات کی قسم جس نے دانے سے کونپل کو پھاڑ کر نکالا ہے اور مخلوق کو پیدا کیا۔ ہمارے پاس قرآن مجید کے سوا اور کچھ نہیں ہے۔ سوا اس سمجھ کے جو کسی شخص کو اس کی کتاب میں دی جائے اور جو کچھ اس صحیفہ میں ہے۔ میں نے پوچھا صحیفہ میں کیا ہے؟ فرمایا خون بہا (دیت) سے متعلق احکام اور قیدی کے چھڑانے کا حکم اور یہ کہ کوئی مسلمان کسی کافر کے بدلہ میں قتل نہیں کیا جائے گا۔ (صحیح البخاری حدیث نمبر 6903)

علیt نے ہمیں اینٹ کے بنے ہوئے منبر کر کھڑا ہو کر خطبہ دیا۔ آپ تلوار لیے ہوئے تھے جس میں ایک صحیفہ لٹکا ہوا تھا۔ آپ نے فرمایا: واللہ! ہمارے پاس کتاب اللہ کے سوا کوئی اور کتاب نہیں جسے پڑھا جائے اور سوا اس صحیفہ کے۔ پھر انہوں نے اسے کھولا تو اس میں دیت میں دئیے جانے والے اونٹوں کی عمروں کا بیان تھا۔ (کہ دیت میں اتنی اتنی عمر کے اونٹ دئیے جائیں) اور اس میں یہ بھی تھا کہ مدینہ طیبہ کی زمین عیر پہاڑی سے ثور پہاڑی تک حرم ہے۔ پس اس میں جو کوئی نئی بات (بدعت) نکالے گا اس پر اللہ کی لعنت ہے اور فرشتوں کی اور تمام لوگوں کی۔ اللہ اس سے کسی فرض یا نفل عبادت کو قبول نہیں کرے گا اور اس میں یہ بھی تھا کہ مسلمانوں کی ذمہ داری (عہد یا امان) ایک ہے اس کا ذمہ دار ان میں سب سے ادنیٰ مسلمان بھی ہو سکتا ہے پس جس نے کسی مسلمان کا ذمہ توڑا، اس پر اللہ کی لعنت ہے اور فرشتوں کی اور تمام لوگوں کی۔ اللہ اس کی نہ فرض عبادت قبول کرے گا اور نہ نفل عبادت اور اس میں یہ بھی تھا کہ جس نے کسی سے اپنی والیوں کی اجازت کے بغیر ولاء کا رشتہ قائم کیا اس پر اور فرشتوں اور تمام انسانوں کی لعنت ہے، اللہ نہ اس کی فرض نماز قبول کرے گا نہ نفل۔ (صحیح البخاری حدیث نمبر 7300)

مسند ابوہریرہ رضی اللہ عنہ

اس کے بہت سے نسخے عہد صحابہ] میں لکھے گئے تھے اس کی ایک نقل عمر بن عبدالعزیز کے والد عبدالعزیز بن مروان والئی مصر کے پاس تھی عبدالعزیز بن مروان نے کثیر بن مرہ کو لکھا تھا کہ

’’آپ کے پاس صحابہ کرام] کی جتنی مرویات ہیں وہ ہمیں لکھ کر بھیج دیں مگر ابوہریرہt کی مرویات بھیجنے کی ضرورت نہیں کیونکہ وہ پہلے ہی ہمارے پاس موجود ہیں۔‘‘ (الطبقات الکبریٰ لا بن سعد 448/77)

یہ پڑھیں:              عورت کا استحصال ... ایک معاشرتی بگاڑ

صحیفہ ہمام بن منبہ:

ہمام بن منبہ سیدنا ابوہریرہt کے شاگرد اور معروف تابعی ہیں انہوں نے ’’صحیفہ الصحیحہ‘‘ کے نام سے 138 احادیث پر مشتمل ایک صحیفہ مرتب کیا اور سیدنا ابوہریرہt سے اس کی تصیحح و تصویب کروائی ۔ یاد رہے کہ ابو ہریرہؓ 58 ہجری میں فوت ہوئے جس کا واضح نتیجہ یہ نکلتا ہے کہ یہ صحیفہ 58 ہجری سے پہلے ترتیب دیا گیا تھا۔

ڈاکٹر حمیداللہ صاحب کو اس کے دو قلمی نسخے ملے ایک 1933 میں برلن کی کسی لائبریری سے اور دوسرا مخطوطہ دمشق کی ایک لائبریری سے ملا۔ تب انہوں نے ان دونوں نسخوں کا تقابل کر کے 1955ء میں حیدرآباد دکن سے ’’صحیفہ ہمام بن منبہ‘‘ کے نام سے شائع کیا اس صحیفے میں کل 138 احادیث ہیں اسی صحیفے کے متعلق معروف عالم دین مولانا عبدالرحمن کیلانی صاحب اپنی کتاب آئینہ پرویزیت میں لکھتے ہیں کہ

’’صحیفہ ہمام بن منبہ ، جسے ڈاکٹر حمید اللہ صاحب نے حال ہی میں شائع کیا ہے، ہمیں یہ دیکھ کر کمال حیرت ہوتی ہے کہ یہ صحیفہ پورے کا پورا مسند احمد بن حنبل میں مندرج ہے۔ اور بعینہٖ اسی طرح درج ہے جس طرح قلمی نسخوں میں ہے ماسوائے چند لفظی اختلافات کے، جن کا ذکر ڈاکٹر حمید اللہ صاحب نے کر دیا ہے۔ لیکن جہاں تک زبانی روایات کی وجہ سے معنوی تحریف کے امکان کا تعلق ہے، اس کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔اب دیکھیے احمد بن حنبل کا سنہ وفات 240ھ ہے۔ بعینہٖ صحیفہ مذکور اور مسند احمد بن حنبل میں تقریباً 200 سال کا عرصہ حائل ہے۔ اور دو سو سال کے عرصے میں صحیفہ ہمام بن منبہ کی روایات زیادہ تر زبانی روایات کے ذریعے ہی امام موصوف تک منتقل ہوتی رہیں۔ اب دونوں تحریروں میں کمال یکسانیت کا ہونا کیا اس بات کا واضح ثبوت نہیں کہ زبانی روایات کا سلسلہ مکمل طور پر قابل اعتماد تھا۔صحیفہ کی اشاعت اور تقابل کے بعد دو باتوں میں ایک بات بہرحال تسلیم کرنا پڑتی ہے: 1زبانی روایات ، خواہ ان پر دو سو سال گزر چکے ہوں ، قابل اعتماد ہو سکتی ہیں۔ 2یہ کہ کتابتِ حدیث کا سلسلہ کسی بھی وقت منقطع نہیں ہوا۔‘‘ (آئینۂ پرویزیت، ص:534-533)

جامعہ الازہر کے معروف عالم ڈاکٹر رفعت فوزی عبد المطلب اس مطبوعہ صحیفے کی تحقیق، تخریج اور شرح کا کام کر رہے تھے اور وہ آدھا کام کر چکے تھے، حسن اتفاق ایسا ہوا کہ ’’دارالکتب المصریہ‘‘ سے ایک اور مخطوطہ ان کے ہاتھ لگ گیا جو سن557 ہجری کا مکتوب تھا۔ اس مخطوطے میں ان دونوں کے مقابلے میں ایک حدیث زائد ہے اور یہ زائد حدیث مسند احمد میں شامل صحیفے کی احادیث میں بھی موجود ہے۔ اب ڈاکٹر رفعت فوزی نے اسی مصری مخطوطے کو بنیاد بنا کر کام مکمل کیا۔ اسے ’’المکتبہ الخانجی‘‘ نے پہلی مرتبہ ستمبر 1985ء (بمطابق محرم الحرام 1406ھ) میں قاہرہ سے شائع کیا۔ صحیفہ ہمام بن منبہ کی 139 احادیث کی تفصیل کچھ یوں ہے :61 - عقائد وایمانیات46 – عبادات9 – معاملات17 - اخلاق و آداب9 – متفرقات12 - احادیث قدسیہ (صحیفہ ہمام بن منبہ،حافظ عبد اللہ شمیم،ناشر: انصار السنہ پبلیکیشنز لاہور)

یہ پڑھیں:              ریاستِ مدینہ کا ہلکا سا تقابل

اس کی اکثر روایات صحیح بخاری اور صحیح مسلم میں بھی ملتی ہیں، الفاظ ملتے جلتے ہیں کوئی نمایاں فرق نہیں، ابوہریرہt پہلے احادیث نہیں لکھا کرتے تھے، ممکن ہے کہ انہوں نے کتابت حدیث کا یہ سلسلہ رسول اللہ e کی وفات کے بعد شروع کیا، یہ بھی ممکن ہے کہ انہوں نے کسی دوسرے شخص سے احادیث مرتب کرائی ہوں۔ ( فتح الباری، ج 1، ص 274)

اس کے علاوہ صحیفہ انس‘ خطبہ فتح مکہ (جو ابو شاہ کے لیے لکھا گیا تھا) صحیفہ جابر بن عبداللہ‘ مرویات ابن عباس ‘ مرویات عائشہ اور صحیفہ عمر و بن حزام (جب نبیe نے یمن کا گورنر مقرر کیا تو انہیں لکھ کر دیا گیا تھا اس صحیفے میں فرائض‘ سنن‘ صدقات و دیات اور دیگر 21 فرامین نبویہ شامل ہیں)

مزید برآں رسالہ سمرہ بن جندب ‘ رسالہ سعد بن عبادہ اور صحیفہ عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہم جس کے بارے میں ان کے بیٹے عبدالرحمن نے حلفاً کہا تھا کہ یہ ان کے باپ عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ نے اپنے ہاتھ سے لکھا تھا۔ (جامع بیان العلم 300/11)

یہ تمام صحیفے رسالے اور کتب صحابہ کرام کی تحریریں تھیں جن میں انہوں نے مرفوع احادیث جمع کی تھیں۔

(جاری ہے)


No comments:

Post a Comment

Pages